بال جبریل (حصہ دوم)علامہ اقبال شاعری

عقل گو آستاں سے دور نہيں


عقل گو آستاں سے دور نہيں
اس کی تقدير ميں حضور نہيں
دل بينا بھی کر خدا سے طلب
آنکھ کا نور دل کا نور نہيں
علم ميں بھی سرور ہے ليکن
يہ وہ جنت ہے جس ميں حور نہيں
کيا غضب ہے کہ اس زمانے ميں
ايک بھی صاحب سرور نہيں
اک جنوں ہے کہ باشعور بھی ہے
اک جنوں ہے کہ باشعور نہيں
ناصبوری ہے زندگی دل کی
آہ وہ دل کہ ناصبور نہيں
بے حضوری ہے تيری موت کا راز
زندہ ہو تو تو بے حضور نہيں
ہر گہر نے صدف کو توڑ ديا
تو ہی آمادہ ظہور نہيں
ارنی ميں بھی کہہ رہا ہوں ، مگر
يہ حديث کليم و طور نہيں

———————-

Translation

Aqal Go Astan Se Door Nahin
Iss Ki Taqdeer Mein Huzoor Nahin

Dil-E-Beena Bhi Kar Khuda Se Talab
Ankh Ka Noor Dil Ka Noor Nahin

Ilm Mein Bhi Suroor Hai Lekin
Ye Woh Jannat Hai Jis Mein Hoor Nahin

Kya Ghazab Hai Kh Iss Zamane Mein
Aik Bhi Sahib-E-Suroor Nahin

Ek Junoon Hai K Ba-Shaur Bhi Hai
Ek Junoon Hai K Ba-Shaur Nahin

Na-Saboori  Hai Zindagi Dil Ki
Aah Woh Dil K Na-Saboor Nahin

Be-Huzoori Hai Teri Mout Ka Raaz
Zinda Ho Tu To Be-Huzoor Nahin

Har Guhar Ne Sadaf Ko Tor Diya
Tu Hi Amada’ay Zahoor Nahin

‘ARINI’ Mein  Bhi Keh Raha Hon, Magar
Ye Hadees-E-Kaleem (A.S)-O-Toor Nahin

————————-

Though reason to the portal guide,
Yet entry to it is denied.

Beg God to grant a lighted heart,
For light and sight are things apart.

Though knowledge lends to mind a glow,
No hoor is its Eden can ever show.

How strange that in the present time
No one owns the joy sublime!

Some passions leave the mind intact,
While others make it blind to fact.

The heart from unrest gets its life,
What pity if it knows no strife!

You die because from God you flee,
If living, linked with God shall be.

The pearls have all their covering cleft,
Of urge to show you are bereft.

Show unto me, though I too cry,
It is not tale of Moses and Sinai.
Tags

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button