Home / علامہ اقبال شاعری / تمام عارف و عامي خودي سے بيگانہ
Tamaam Aarif wa Aamii Khudi Say Bygaana

تمام عارف و عامي خودي سے بيگانہ

(Armaghan-e-Hijaz-32)

Tamam Arif-o-Aami Khudi Se Begana

(تمام عارف و عامی خودی سے بیگانہ)

All high and low are unaware of Khudi

تمام    عارف و عامي خودي سے بيگانہ
کوئي بتائے يہ مسجد ہے يا کہ ميخانہ
يہ راز ہم سے چھپايا ہے مير واعظ نے
کہ خود حرم ہے چراغ حرم کا پروانہ
طلسم بے خبري، کافري و ديں داري
حديث شيخ و برہمن فسون و افسانہ
نصيب خطہ ہو يا رب وہ بندئہ درويش
کہ جس کے فقر ميں انداز ہوں کليمانہ
چھپے رہيں گے زمانے کي آنکھ سے کب تک
گہر ہيں آب ولر کے تمام يک دانہ

Translitation

Tamam Arif-O-Ami Khudi Se Begana
Koi Bataye Ye Masjid Hai Ya K Maikhana

All high and low are unaware of khudi:
is it a mosque or tavern?

Ye Raaz Hum Se Chupaya Hai Meer Waaiz Ne
Ke Khud Haram Hai Charagh-E-Haram Ka Parwana

The head preacher has withheld this secret from us:
the Harem itself is the moth moving round Harem’s lamp.

Tilism-E-Bekhabri, Kafari-O-Deendari
Hadees-E-Sheikh-O-Barhaman Fusoon-O-Afsana

Faith and kufr, only talisman of ignorance,
talking of Shaykh and Brahman is all myth;

Naseeb-E-Khitta Ho Ya Rab Woh Band’ay Darvesh
Ke Jis Ke Faqr Mein Andaz Hon Kaleemana

O God, may the valley have a dervish
Whose faqr works Moses‐like;

Chupay Rahain Ge Zamane Ki Ankh Se Kab Tak
Guhar Hain Aab-E-Woolar Ke Tamam Yakdana

How long would they remain hidden from the world?
The unique gems that the Wooler Lake has in its depth.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے