عہدِ طفلی

تھے ديارِ نو زمين و آسماں ميرے ليے
وسعتِ آغوشِ مادر اِک جہاں ميرے ليے
تھی ہر اک جنبش نشانِ لطفِ جاں ميرے ليے
حرفِ بے مطلب تھی خود ميری زباں ميرے ليے

درد ، طفلی ميں اگر کوئی ُرلاتا تھا مجھے
شورشِ زنجيرِ در ميں لطف آتا تھا مجھے

تکتے رہنا ہائے! وہ پہروں تلک سُوئے قمر
وہ پھٹے بادل ميں بے آوازِ پا اُس کا سفر
پوچھنا رہ رہ کے اُس کے کوہ و صحرا کی خبر
!اور وہ حيرت دروغِ مصلحت آميز پر

آنکھ وقفِ ديد تھی ، لب مائلِ گفتار تھا
دل نہ تھا ميرا ، سراپا ذوقِ استفسار تھا

مشکل الفاظ کے معنی

عہدطفلی: بچپن کا زمانہ، دیار نو: نۓ ملک، نئ دنیا، مادر: ماں، جنبش: ہلنے کی حالت، لطف جاں: روح کے لیے مزے کی بات، شورش: شور، زنجیردر: دروازے کی کنڈی، پہروں تلک: بڑی دیر تک، سوۓ قمر: چاند کی طرف، پھٹابادل: ٹکڑیوں میں بٹا بادل کہ کہیں ہواور کہیں نہ ہو، آوازپا: پاؤں کی چاپ، رہ رہ کے: گھڑی گھڑی، بار بار، کوہ: پہاڑ، دروغ مصلحت آمیز: ایسا جھوٹ جس میں کو‎‎‎‎ئی بھلائی ہو، وقف دید: دیکھنے میں مصروف، لب: ہونٹ، مائل گفتار: بولنےکو تیار، ذوق استفسار: سوال کرتے رہنے/پوچھتے رہنے کا لطف

……………….

TRANSLITERATION

Ehad-e-Tifli
(1)
thay diyar e nau zameen o aasman mere liye
wussat e aaghaush e madar ek jahan mere liye
(2)
thi har ek junbish nishan e lutf e jaan mere liye
harf e be matlab thi khud meri zuban mere liye
(3)
dard, tiflee mein agar koi rulata tha mujhe
shorish e zanjeer e dar mein lutf aata tha mujhe
(4)
takte rehana haye! vo pehron talak suay qamar
vo phate badal mein be aawaz e paa uss ka safar
(5)
pochna reh reh ke uss ke koh o sehra ki khabar
aur vo herat darogh e muslahat aamaz per
(6)
aankh waqaf e deed thi, lab mayal e guftar tha
dil na tha mera, sarapa zauq e istafsar tha

 ——————

The Age of Infancy

The earth and sky were unknown worlds to me
Only the expanse of mother’s bosom was a world to me
Every movement was a symbol of life’s pleasure to me
My own speech was like a meaningless word to me
During infancy’s pain if somebody made me cry
The noise of the door chain would comfort me
Oh! How I stared at the moon for long hours
Staring at its silent journey among broken clouds
I would ask repeatedly about its mountains and plains
And how surprised would I be at that prudent lie
My eye was devoted to seeing, my lip was prone to speak
My heart was no less than inquisitiveness personified

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے