Main Band-e-Nadan Hun, Magar Shukar Hai Tera

شکر و شکايت

ميں بندہ ناداں ہوں، مگر شکر ہے تيرا
رکھتا ہوں نہاں خانہ لاہوت سے پيوند

اک ولولہ تازہ ديا ميں نے دلوں کو
لاہور سے تا خاک بخارا و سمرقند

تاثير ہے يہ ميرے نفس کی کہ خزاں ميں
مرغان سحر خواں مری صحبت ميں ہيں خورسند

ليکن مجھے پيدا کيا اس ديس ميں تو نے
جس ديس کے بندے ہيں غلامی پہ رضا من
د

————

Transliterations

Shukar-e-Shikayat

Main Band-e-Nadan Hun, Magar Shukar Hai Tera
Rakhta Hun Nihan Khana-e-Lahoot Se Pewand

Ek Walwala Taza Diya Main Ne Dilon Ko
Lahore Se Ta-Bakhak-e-Bukhara-o-Samarqand

Taseer Hai Ye Mere Nafas Ki Ke Khazan Mein
Murghan-e-Sehar Khawan Meri Sohbat Mein Hain Khoursand

Lekin Mujhe Paida Kiya Uss Dais Mein Tu Ne
Jis Dais Ke Bande Hain Ghulami Pe Razamand!

 

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے