نيا شوالا


سچ کہہ دوں اے برہمن! گر تو برا نہ مانے
تيرے صنم کدوں کے بت ہو گئے پرانے
اپنوں سے بير رکھنا تو نے بتوں سے سيکھا
جنگ و جدل سکھايا واعظ کو بھی خدا نے
تنگ آ کے ميں نے آخر دير و حرم کو چھوڑا
واعظ کا وعظ چھوڑا، چھوڑے ترے فسانے

پتھر کی مورتوں ميں سمجھا ہے تو خدا ہے
خاک وطن کا مجھ کو ہر ذرہ ديوتا ہے

آ ، غيريت کے پردے اک بار پھر اٹھا ديں
بچھڑوں کو پھر ملا ديں نقش دوئی مٹا ديں
سونی پڑی ہوئی ہے مدت سے دل کی بستی
آ ، اک نيا شوالا اس ديس ميں بنا ديں
دنيا کے تيرتھوں سے اونچا ہو اپنا تيرتھ
دامان آسماں سے اس کا کلس ملا ديں
ہر صبح اٹھ کے گائيں منتر وہ مٹيھے مٹيھے
سارے پجاريوں کو مے پيت کی پلا ديں

شکتی بھی شانتی بھی بھگتوں کے گيت ميں ہے
دھرتی کے باسيوں کی مکتی پريت ميں ہے

————–

Transliteration

Naya Shiwala

Sach Keh Doon Ae Barhman! Gar Tu Bura Na Mane
Tere Sanam Kadon Ke Butt Ho Gye Purane

Apnon Se Bair Rakhna Tu Ne Button Se Se Sikha
Jang-o-Jadal Sikhaya Waaiz Ko Bhi Khuda Ne

Tang Aa Ke Main Ne Akhir Dair-o-Haram Ko Chora
Waaiz Ka Waaz Chora, Chore Tere Fasane

Pathar Ki Mootraton Mein Samjha Hai Tu Khuda Hai
Khak-e-Watan Ka Mujh Ko Har Zarra Devta

Aa, Ghairiat Ke Parde Ek Baar Phir Utha Dain
Bichron Ko Phir Mila Dain, Naqsh-e-Dooi Mita Dain

Sooni Pari Huwi Hai Muddat Se Dil Ki Basti
Aa, Ek Naya Shiwala Iss Dais Mein Bana Dain

Dunya Ke Teerathon Se Ucha Huwa Apna Teerath
Damaan-e-Asman Se Iss Ka Kalas Mila Dain

Har Subah Uth Ke Gayen Mantar Woh Meethe Meethe
Sare Pujariyon Ko Mai Peet Ki Pila Dain

Shakti Bhi, Shanti Bhi Bhagton Ke Geet Mein Hai
Dharti Ke Basion Ki Mukti Pareet Mein Hai

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے