Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) / کريں گے اہل نظر تازہ بستياں آباد

کريں گے اہل نظر تازہ بستياں آباد


کريں گے اہل نظر تازہ بستياں آباد
مری نگاہ نہيں سوئے کوفہ و بغداد
يہ مدرسہ ، يہ جواں ، يہ سرور و رعنائی
انھی کے دم سے ہے ميخانہ فرنگ آباد
نہ فلسفی سے ، نہ ملا سے ہے غرض مجھ کو
يہ دل کی موت ، وہ انديشہ و نظر کا فساد
فقيہ شہر کی تحقير! کيا مجال مری
مگر يہ بات کہ ميں ڈھونڈتا ہوں دل کی کشاد
خريد سکتے ہيں دنيا ميں عشرت پرويز
خدا کی دين ہے سرمايہ غم فرہاد
کيے ہيں فاش رموز قلندری ميں نے
کہ فکر مدرسہ و خانقاہ ہو آزاد
رشی کے فاقوں سے ٹوٹا نہ برہمن کا طلسم
عصا نہ ہو تو کليمی ہے کار بے بنياد

———————–

Translation

Karain Ge Ahl-e-Nazar Taza Bastiyan Abad
Meri Nigah Nahin Soo’ay Kufa-o-Baghdad

Ye Madrasa, Ye Jawan, Ye Suroor-o-Rinayi
Inhi Ke Dam Se Hai Maikhana-e-Farang Abad

Na Falsafi Se, Na Mullah Se Hai Gharz Mujh Ko
Ye Dil Ki Mout, Woh Andaisha-o-Nazar Ka Fasad

Faqeeh-e-Shehar Ki Tehqeer! Kya Majal Meri
Magar Ye Baat Ke Main Dhoondta Hun Dil Ki Kushad

Khareed Sakte Hain Dunya Mein Ishrat-e-Parwaiz
Khuda Ki Dayn Hai Sarmaya-e-Gham-e-Farhad

Kiye Hain Faash Rumooz-e-Qalandari Main Ne
Ke Fikar-e-Madrasa-o-Khanqah Ho Azad

Rishi Ke Faqon Se Toota Na Barhaman Ka Tilism
Assa Na Ho To Kaleemi Hai Kaar-e-Bebunyad

————————————–

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

فقر کے ہيں معجزات تاج و سرير و سپاہ

فقر کے ہيں معجزات تاج و سرير و سپاہ فقر ہے ميروں کا مير ، …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے