مِرزا غالب

فکرِ انساں پر تری ہستی سے يہ روشن ہوا
ہے پر مرغِ تخيّل کی رسائی تا کُجا
تھا سراپا روح تو ، بزمِ سخن پيکر ترا
زيبِ محفل بھی رہا محفل سے پنہاں بھی رہا

ديد تيری آنکھ کو اُس حسن کی منظور ہے
بن کے سوزِ زندگی ہر شے ميں جو مستور ہے

محفلِ ہستی تری بربط سے ہے سرمايہ دار
جس طرح ندّی کے نغموں سے سکوتِ کوہسار
تيرے فردوسِ تخيّل سے ہے قدرت کی بہار
تيری کشتِ فکر سے اُگتے ہيں عالم سبزہ وار

زندگی مضمر ہے تيری شوخئ تحرير ميں
تابِ گويائی سے جنبش ہے لبِ تصوير ميں

نطق کو سو ناز ہيں تيرے لبِ اعجاز پر
محوِ حيرت ہے ثريّا رفعتِ پرواز پر
شاہدِ مضموں تصدّق ہے ترے انداز پر
خندہ زن ہے غنچۂ دلّی گُلِ شيراز پر

آہ! تو اُجڑی ہوئی دلّی ميں آراميدہ ہے
گلشنِ ويمر ميں تيرا ہم نوا خوابيدہ ہے

لطفِ گويائی ميں تيری ہمسری ممکن نہيں
ہو تخيّل کا نہ جب تک فکرِ کامل ہم نشيں
!ہائے! اب کيا ہو گئی ہندوستاں کی سر زميں
آہ! اے نظّارہ آموزِ نگاہِ نکتہ بيں

گيسوئے اُردو ابھی منّت پذيرِ شانہ ہے
شمع يہ سودائی دل سوزئ پروانہ ہے

اے جہان آباد! اے گہوارۂ علم و ہنر
ہيں سراپا نالۂ خاموش تيرے بام و در
ذرّے ذرّے ميں ترے خوابيدہ ہيں شمں و قمر
يوں تو پوشيدہ ہيں تيری خاک ميں لاکھوں گُہر

دفن تجھ ميں کوئی فخرِ روزگار ايسا بھی ہے؟
تجھ ميں پنہاں کوئی موتی آبدار ايسا بھی ہے؟

—————

مشکل الفاظ کے معنی

مرزا غالب: اردو، فارسی کے مشہور شاعر(1797ء،1869ء)، فکر:سوچ، روشن ہونا: ظاہر ہونا، مرغ تخیل: فکر اور خیالات کا پرندہ، رسائی: پہنچ، تا کجا: کہاں تک، بزم سخن: مراد شاعری، پیکر: جسم، زیب محفل: بزم سجانے والا، محفل کی رونق، دید:دیدار، اس حسن: مراد محبوب حقیقی کا حسن، منظور: پیش نظر، سوز زندگی: زندگی کی حرارت، ہرشے: مراد کائنات کی ہر چیز میں، مستور: چھپا ہوا، محفل ہستی: وجود یعنی دنیا کی بزم، بر بط: ایک قسم کا باجا، مراد شاعری، سرمایہ دار: مال دار، فردوس تخیل: تخیل کی جنت، کشت: کھیتی، فصل، عالم: دنیائیں، مراد نئے نئے مضامین، سبزہ وار: سبزے کی طرح، مضمر: چھپی ہوئی،شوخی تحریر: مراد دل میں اثر کرنے والے شگفتہ اشعار، تاب گویائی: بولنے کی طاقت، نطق: زبان، لب اعجاز: یعنی معجزہ کی سی کیفیت رکھنے والے اشعارکہنے والی زبان، محوحیرت: حیرانی میں گم، رفعت پرواز:  یعنی مضامین کے لحاظ سے بلندی پر اڑنا، شاہد: محبوب، حسین، تصدق: قربان، انداز: مراد شعرگوئی کا طریقہ، خندہ زن: ہنسی/مذاق اڑانے والا، غنچہ دلی: دلی کی کلی مراد غالب، گل شیراز: شیراز کا پھول(حافظ شیرازی، شیخ سعدی شیرازی)، آرامیدہ ہے: آرام کررہا ہے، دفن ہے، گلشن ویمر: جرمنی کے شہر ویمر کا باغ، ویمرمیں جرمنی کے مشہور شاعرگوئٹے (1749ء،1834ء)کی قبر ہے، ہم نوا: ساتھ گانے والا، مراد گوئٹے، خوابیدہ: سویا ہوا یعنی دفن ہے، لطف گویائی: بولنے یعنی شعر کہنےکا مزہ، ہمسری: برابری، فکرکامل: پختہ سوچ،سوچ بچار اور غور کرنے کی پوری طاقت، نظارہ آموز: دیکھنے یعنی مشاہدہ کا ڈھنگ سکھانے والی، نگاہ نکتہ بیں:باریکیوں یا بھیدوں کو دیھکنے والی نگاہ، گیسوئے اردو: اردو کی زلفیں، یعنی اردو زبان، منت پذیر: احسان مند، شانہ: کنگھی،شمع: مراد اردو زبان، سودائی: مشتاق، دل سوزی پروانہ: مراد پتنگے کی محبت، جہان آباد: دہلی کا پرانا نام، گہوارہ: تربیت گاہ،نالہ خاموش: ایسی فریاد جسن میں آواز نہ ہو، بام و در: چھت اور دروازے، شمس و قمر: سورج اور چاند، مراد بڑی بڑی ہستیاں،گہر: گوہر یعنی عمل و فضل والے، فخر روزگار: زمانے کے لیے باعث فخر، موتی: مراد شخصیت، آبدار: چمک دار، مراد عظمت والا، ایسا بھی ہے؟: مراد نہیں ہے

……………..

TRANSLITERATION

Mirza Ghalib

Fikar-e- Insan Per Teri Hasti Se Ye Roshan Huwa

Hai Per-e-Muragh-e-Takhayul Ki Rasayi Ta Kuja

Tha Sarapa Rooh Tu, Bazm-e- Sukhan Pekar Tera

Zaib-E-Mehfil Bhi Raha, Mehfil Se Pinhan Bhi Raha

Deed Teri Aankh Ko Uss Husn Ki Manzoor Hai

Ban Ke Souz e-Zindagi Her Shay Mein Jo Mastoor Hai

Mehfil-e-Hasti Teri Barbat Se Hai Sarmayadar

Jis Tarah Naddi Ke Naghmon Se Sakoot-E-Kohsar

Tere Ferdous-e-Takhayul Se Hai Qudrat Ki Bahar

Teri Kisht-e-Fikar Se Ugte Hain Aalam Sabza War

Zindagi Muzmer Hai Teri Shaukhi-e-Tehreer Mein

Tab-E-Goyai Se Junbish Hai Lab-e-Tasveer Mein

Nutaq Ko So Naz Hain Tere Lab-e-Ejaz Per

Mehv-e-Hairat Hai Surayya Rifat-e- Parwaz Per

Shahid-e-Mazmoon Tassaduq Hai Tere Andaz Per

Khandazan Hai Guncha-e-Dilli Gul-e-Shiraz Per

Aah! Tu Ujhari Huwi Dilli Mein Aaramida Hai

Gulshan-e-Weimar* Mein Tera Humnawa Khawabida Hai

* Weimar : Germani Ka Mashoor Shayar Goethe Iss Jagha Madfoon Hai

Lutaf-e-Goyai Mein Teri Humsari Mumkin Nahin

Ho Takhayyul Ka Na Jab Tak Fikar-e-Kamil Hum Nasheen

Matching you in literary elegance is not possible

Till maturity of thought and imagination are combined

Haye! Ab Kya Ho Gyi Hindustan Ki Ser Zameen

Ah! Ae Nazara Aamoz-e-Nigah-e-Nukta Been

Gaisuay Urdu Abhi Mannat Pazeer-e-Shana Hai

Shama Ye Sodai-e-Dilsozi-e-Perwana Hai

Ae Jahan Abad! Ae Gehwara-e-Ilam-o-Hunar

Hain Sarapa Nala-e-Khamosh Tere Baam-o-Der

Zarre Zarre Mein Tere Khabidah Hein Shamas-o-Qamar

Yun To Poshida Hain Teri Khak Mein Lakhon Gohar

Dafan Tujh Mein Koi Fakhar-e-Rozgar Aesa Bhi Hai?

Tujh Mein Pinhan Koi Moti Aab Dar Aesa Bhi Hai?

—————

Mirza Ghalib

Through you the secret was revealed to the human intellect
That innumerable enigmas are solved by human intellect

You were the complete soul, literary assembly was your body
You adorned as well as remained veiled from the assembly

Your eye is longing to witness that veiled Beauty
Which is veiled in everything as the pathos of life

The assemblage of existence is rich with your harp
As mountain’s silence by the brook’s melodious harp

The garden of your imagination bestows glory on the universe
From the field of your thought worlds grow like meadows

Life is concealed in the humour of your verse
Picture’s lips move with your command of language

Speech is very proud of the elegance of your miraculous lips
Thurayyah is astonished at your style’s elegance

Beloved of literature itself loves your style
Delhi’s bud is mocking at the rose of Shiraz

Ah! You are resting in the midst of Delhi’s ruins
Your counterpart is resting in the Weimar’s garden

Matching you in literary elegance is not possible
Till maturity of thought and imagination are combined

Ah! What has befallen the land of India!
Ah! The inspirer of the super‐critical eye!

The lock of Urdu’s hair still craves for combing
This candle still craves for moth’s heart‐felt pathos

O Jahanabad! O cradle of learning and art
Your entire super‐structure is a silent lament

The sun and the moon are asleep in every speck of your dust
Though innumerable other gems are also hidden in your dust

Does another world‐famous person like him also lie buried in you?
Does another gem like him also lie concealed in you?

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے