گرم ہو جاتا ہے جب محکوم قوموں کا لہو

(Armaghan-e-Hijaz-25)

Garam Ho Jata Hai Jab Mehkoom Qaumon Ka Lahoo

(گرم ہو جاتا ہے جب محکوم قوموں کا لہو)

When the enslaved people’s rage boils

گرم ہو جاتا ہے جب محکوم قوموں کا لہو
تھرتھراتا ہے جہان چار سوے و رنگ و بو
پاک ہوتا ہے ظن و تخميں سے انساں کا ضمير
کرتا ہے ہر راہ کو روشن چراغ آرزو
وہ پرانے چاک جن کو عقل سي سکتي نہيں
عشق سيتا ہے انھيں بے سوزن و تار رفو
ضربت پيہم سے ہو جاتا ہے آخر پاش پاش
حاکميت کا بت سنگيں دل و آئينہ رو

Trasliteration

Garam Ho Jata Hai Jab Mehkoom Qoumon Ka Lahoo
Thartharata Hai Jahan-E-Chaar Suay-O-Rang-O-Boo

When the enslaved people’s rage boils and they rise in revolt against the master,
this world of near and far, of colour and smell, becomes the scene of tremors and convulsions.

Pak Hota Hai Zan-O-Takhmeen Se Insan Ka Zameer
Karta Hai Har Rah Ko Roshan Charagh-E-Arzoo

It purifies man’s conscience—eschewing all doubts and misgivings—
When the lamp of high ideals is lit, brightening all paths leading to the goal.

Vo Purane Chaak Jin Ko Aqal Si Sakti Nahin
Ishq Sita Hai Unhain Be-Sozan-O-Taar-E-Rafoo

There are old maladies and ancients scars the people suffer from, that intellect fails to cure and heal,
but love shows its skill and without the help of physician’s talents removes all scars and cures all woes.

Zarbat-E-Peham Se Ho Jata Hai Akhir Pash Pash
Hakmiat Ka But-E-Sangeen Dil-O-Aaeena Roo

The master’s sturdy body—with a heart of stone and face of a mirror—
gets soon smashed up and beaten down at the repeated blows of the weak slave

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے