Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) / مکتبوں ميں کہيں رعنائی افکار بھی ہے؟

مکتبوں ميں کہيں رعنائی افکار بھی ہے؟


مکتبوں ميں کہيں رعنائی افکار بھی ہے؟
خانقاہوں ميں کہيں لذت اسرار بھی ہے؟
منزل راہرواں دور بھی ، دشوار بھی ہے
کوئی اس قافلے ميں قافلہ سالار بھی ہے؟
بڑھ کے خيبر سے ہے يہ معرکہ دين و وطن
اس زمانے ميں کوئی حيدر کرار بھی ہے؟
علم کی حد سے پرے ، بندہ مومن کے ليے
لذت شوق بھی ہے ، نعمت ديدار بھی ہے
پير ميخانہ يہ کہتا ہے کہ ايوان فرنگ
سست بنياد بھی ہے ، آئنہ ديوار بھی ہے

————————–

Translation

Maktabon Mein Kahin Raanayi-e-Afkaar Bhi Hai?
Khanqahon Mein Kahin Lazzat-e-Asrar Bhi Hai?

Manzil-e-Rahrawan Door Bhi, Dushwar Bhi Hai
Koi Iss Qafle Mein Qafla Salaar Bhi Hai?

Barh Ke Khayber Se Hai Ye Maarka-e-Deen-o-Watan
Iss Zamane Mein Koi Haidar-e-Karar Bhi Hai?

Ilm Ki Had Se Pare, Banda-e-Momin Ke Liye
Lazzat-e-Shauq Bhi Hai, Naimat-e-Didar Bhi Hai

Peer-e-Maikhana Ye Kehta Hai Ke Aiwan-e-Farang
Sust Bunyad Bhi Hai, Aaeena Diwar Bhi Hai !

————————————–

The schools bestow no grace of fancy fine,
Cloisters impart no glow of Love Divine.

The goal that Travellers seek is far and wide,
Alas! There is no chief to lead and guide.

No less than Khyber, the war of faith and land,
But warrior like Ali (R.A.) is not at hand.

Beyond the bounds of science for faithful thrall
Is bliss of love and sight of God withal.

The chief of tavern thinks that West has raised
The house on shaking founds, whose walls are glazed.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے