Home / علامہ اقبال شاعری / دگرگوں جہاں ان کے زور عمل سے
Degr-goon Jahaan Inky Zoor e Amal Say

دگرگوں جہاں ان کے زور عمل سے

(Armaghan-e-Hijaz-33)

Digargoon Jahan Un Ke Zor-e-Amal Se

(دگرگوں جہاں ان کے زور عمل سے)

The living nations of the world have won their laurels

دگرگوں جہاں ان کے زور عمل سے
بڑے معرکے زندہ قوموں نے مارے
منجم کي تقويم فردا ہے باطل
گرے آسماں سے پرانے ستارے
ضمير جہاں اس قدر آتشيں ہے
کہ دريا کي موجوں سے ٹوٹے ستارے
زميں کو فراغت نہيں زلزلوں سے
نماياں ہيں فطرت کے باريک اشارے
ہمالہ کے چشمے ابلتے ہيں کب تک
خضر سوچتا ہے ولر کے کنارے

Translitation

Digargoon Jahan Un Ke Zor-E-Amal Se
Bare Maarke Zinda Qoumon Ne Mare

The living nations of the world have won their laurels,
the world transformed through the dynamism of their acts;

Munjam Ki Taqweem-E-Farda Hai Batil
Giray Aasman Se Purane Sitare

the astrologer’s calendar of the future is false,
the old stars have fallen away.

Zameer-E-Jahan Iss Qadar Atisheen Hai
Ke Darya Ki Moujon Se Tootay Sitare

The world’s heart is so fiery
that river waves shoot out stars.

Zameen Ko Faraghat Nahin Zalzalon Se
Numayan Hain Fitrat Ke Bareek Ishare

The earth is experiencing tremors after tremors,
the warnings of Nature are but too clear.

Hamala Ke Chashme Ubalte Hain Kab Tak
Khizar Sochta Hai Woolar Ke Kinare

Khidr, standing by the Wooler, is thinking:
When will the Himalayas’ springs burst forth?

Degr-goon Jahaan Inky Zoor e Amal Say, Bary Maarky Zinda Qoumoon Nay Maary

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے