Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / با ل جبر یل - رباعيات / ہر اک ذرے ميں ہے شايد مکيں دل

ہر اک ذرے ميں ہے شايد مکيں دل

ہر اک ذرے ميں ہے شايد مکيں دل
اسی جلوت ميں ہے خلوت نشيں دل
اسير دوش و فردا ہے و ليکن
غلام گردش دوراں نہيں دل

———————

Transliteration

Har Ek Zarre Mein Hai Shaid Makeen Dil
Issi Jalwat Mein Hai Khalwat Nasheen Dil

A restless heart throbs in every atom;
It has its abode, alone, in a multitude;

Aseer-e-Dosh-o-Farda Hai  Walekin
Ghulam-e-Gardish-e-Doran Nahin Dil

Impaled upon the wheel of days and nights,
It remains unchained by the tyranny of time.

————————–

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے