بال جبریل (حصہ دوم)علامہ اقبال شاعری

پوچھ اس سے کہ مقبول ہے فطرت کی گواہی


پوچھ اس سے کہ مقبول ہے فطرت کی گواہی
تو صاحب منزل ہے کہ بھٹکا ہوا راہی
کافر ہے مسلماں تو نہ شاہی نہ فقيری
مومن ہے تو کرتا ہے فقيری ميں بھی شاہی
کافر ہے تو شمشير پہ کرتا ہے بھروسا
مومن ہے تو بے تيغ بھی لڑتا ہے سپاہی
کافر ہے تو ہے تابع تقدير مسلماں
مومن ہے تو وہ آپ ہے تقدير الہی
ميں نے توکيا پردۂ اسرار کو بھی چاک
ديرينہ ہے تيرا مرض کور نگاہی

———————

Translation

Pooch Iss Se K Maqbool Hai Fitrat Ki Gawahi
Tu Sahib-E-Manzil Hai K Bahtka Huwa Raahi

Kafir Hai Musalman To Na Shahi Na Faqeeri
Momin Hai To Karta Hai Faqeeri Mein Bhi Shahi

Kafir Hai To Shamsheer Pe Karta Hai Bharosa
Momin Hai To Be-Taeg Bhi Larta Hai Sipahi

Kafir Hai To Hai Taba-E-Taqdeer Musalman
Momin Hai, To Who Aap Hai Taqdeer-E-ILAHI

Main Ne To Kiya Parda’ay Asrar Ko Bhi Chaak
Daireena Hai Tera Marz-E-Kaur Nigahi

————————-

Rely on the witness of the phenomenal world
To know whether you are on the mark or have gone astray:

Neither kingship nor poverty for a Muslim who lacks in faith,
The one who has it is a king even if he be poor.

He depends on the sword if he lacks in faith:
If he has faith he may need no weapons in the fight.

A Muslim without faith yields to what his fate ordains;
With faith, he is destiny incarnate.

I revealed the secrets and rent the veil,
But your blindness has no cure

Tags

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button