Home / علامہ اقبال شاعری / ضمير مغرب ہے تاجرانہ، ضمير مشرق ہے راہبانہ

ضمير مغرب ہے تاجرانہ، ضمير مشرق ہے راہبانہ

(Armaghan-e-Hijaz-36)

Zameer-e-Maghrib Hai Tajirana,

Zameer-e-Mashriq Hai Rahbana

 (ضمیر مغرب ہے تاجرانہ ، ضمیر مشرق ہے راہبانہ)

ضمير مغرب ہے تاجرانہ، ضمير مشرق ہے راہبانہ
وہاں دگرگوں ہے لحظہ لحظہ، يہاں بدلتا نہيں زمانہ
کنار دريا خضر نے مجھ سے کہا بہ انداز محرمانہ
سکندري ہو، قلندري ہو، يہ سب طريقے ہيں ساحرانہ
حريف اپنا سمجھ رہے ہيں مجھے خدايان خانقاہي
انھيں يہ ڈر ہے کہ ميرے نالوں سے شق نہ ہو سنگ آستانہ
غلام قوموں کے علم و عرفاں کي ہے يہي رمز آشکارا
زميں اگر تنگ ہے تو کيا ہے، فضائے گردوں ہے بے کرانہ
خبر نہيں کيا ہے نام اس کا، خدا فريبي کہ خود فريبي
عمل سے فارغ ہوا مسلماں بنا کے تقدير کا بہانہ
مري اسيري پہ شاخ گل نے يہ کہہ کے صياد کو رلايا
کہ ايسے پرسوز نغمہ خواں کا گراں نہ تھا مجھ پہ آشيانہ

Translitation

Zameer-e-Magrib Hai Tajirana, Zameer-e-Mashriq Hai Rahabana
Wahan Digargoon Hai Lehza Lehza, Yahan Badalta Nahin Zamana

The ways of the West are calculating, the ways of the East are monkish;
there the times change from moment to moment, here the times see no change whatsoever.

Kinar-E-Darya Khizar Ne Mujh Se Kaha Ba-Andaz-E-Mehramana
Sikandari Ho, Qalanderi Ho, Ye Sub Tareeke Hain Sahirana

Khidr, on the bank of the river, spoke to me thus in confidence:
all are the ways of sorcery, be the actor a king of dervish.

Hareef Apna Samajh Rahe Hain Mujhe Khudayan-E-Khanqahi
Unhain Ye Dar Hai Ke Mere Nalon Se Shiq Na Ho Sang-E-Ashiyana

These people of the monasteries look upon me as their rival;
they fear lest my beautiful songs rent asunder the saint’s threshold stone.

Ghulam Qoumon Ke Ilm-O-Irfan Ki Hai Yehi Ramz Ashakara
Zameen Agar Tang Hai To Kya Hai, Fizaye Gardoon Hai Be-Karana

This is the manifest symbol of the knowledge of the slave people:
What if the earth has limits! the whole expanse of Space is boundless.

Khabar Nahin Kya Hai Naam Iss Ka, Khuda Farebi Ya Khud Farebi
Amal Se Farigh Huwa Musalman Bana Ke Taqdeer Ka Bahana

I can’t see what it is: is it self‐deception of deception of God?
Having invented the excuse of fate, the Muslim has ceased to act meaningfully.

Meri Aseeri Pe Shakh-E-Gul Ne Ye Keh Ke Sayyad Ko Rulaya
Ke Aese Pursouz Naghma Khawan Ka Giran Na Tha Mujh Pe Ashiyana

The rose twig made the hunter weep on seeing me caught in the net:
a charming sweet singer was he, his nest rested harmlessly on my branches.

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے