Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ اول) / گيسوئے تاب دار کو اور بھی تاب دار کر

گيسوئے تاب دار کو اور بھی تاب دار کر

گيسوئے تاب دار کو اور بھی تاب دار کر
ہوش و خرد شکار کر ، قلب و نظر شکار کر
عشق بھی ہو حجاب ميں ، حسن بھی ہو حجاب ميں
يا تو خود آشکار ہو يا مجھے آشکار کر
تو ہے محيط بے کراں ، ميں ہوں ذرا سی آبجو
يا مجھے ہمکنار کر يا مجھے بے کنار کر
ميں ہوں صدف تو تيرے ہاتھ ميرے گہر کی آبرو
ميں ہوں خزف تو تو مجھے گوہر شاہوار کر
نغمۂ نو بہار اگر ميرے نصيب ميں نہ ہو
اس دم نيم سوز کو طائرک بہار کر
باغ بہشت سے مجھے حکم سفر ديا تھا کيوں
کار جہاں دراز ہے ، اب مرا انتظار کر
روز حساب جب مرا پيش ہو دفتر عمل
آپ بھی شرمسار ہو ، مجھ کو بھی شرمسار کر

———————————

Transliteration

Gaisuay Tabdar Ko Aur Bhi Tabdar Kar

Hosh-o-Khirad Shakar Kar, Qalb-o-Nazar Shakar Kar

  Ishq Bhi Ho Hijab Mein, Husn Bhi Ho Hijab Mein

 Ya Tu Khud Ashkar Ho Ya Mujhe Aashkar Kar

 Tu Hai Muheet-e-Bekaran, Mein Hun Zara Si Aabjoo

Ya Mujhe Hamkinar Kar Ya Mujhe Bekinar Kar

 Main Hun Sadaf Tou Tere Hath Mere Guhar Ki Abroo

Mein Hun Khazaf Tou Tu Mujhe Gohar-e-Shahwar Kar

  Naghma’ay Nau Bahar Agar Mere Naseeb Mein Na Ho

Iss Dam-e-Neem Souz Ko Taeerak-e-Bahar Kar

  Bagh-e-Bahisht Se Mujhe Hukam-e-Safar Diya Tha Kyun

Kaar-e-Jahan Daraz hai Ab Mera Intizar Kar

Roz-e-Hisab Jab Mera Paish Ho Daftar-e-Amal

Aap Bhi Sharamsaar Ho, Mujh Ko Bhi Sharamsaar Kar

———————-

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے