Home / علامہ اقبال شاعری / رندوں کو بھي معلوم ہيں صوفی کے کمالات

رندوں کو بھي معلوم ہيں صوفی کے کمالات

(Armaghan-e-Hijaz-27)

Rindon Ko Bhi Maloom Hain Sufi Ke Kamalat

(رندوں کو بھی معلوم ہیں صوفی کے کمالات)

The dissolute know the Sufi’s accomplishments

رندوں    کو بھي معلوم ہيں صوفي کے کمالات
ہر چند کہ مشہور نہيں ان کے کرامات
خود گيري و خودداري و گلبانگ ‘انا الحق’
آزاد ہو سالک تو ہيں يہ اس کے مقامات
محکوم ہو سالک تو يہي اس کا ‘ہمہ اوست’
خود مردہ و خود مرقد و خود مرگ مفاجات

Translitation

Rindon Ko Bhi Maloom Hain Sufi Ke Kamalaat
Har Chand Ke Mashoor Nahin In Ke Karamaat

The dissolute know the Sufi’s accomplishments,
though their miracles are not so well‐known.

Khud Geeri-O-Khudari-O-Gulbang-E-‘Anl-Ul-Haq’
Azad Ho Salik  To Hain Ye Uss Ke Maqamaat

Self‐enrichment, self‐respect and the cry of Ana‐al‐Haq—
these are the states of the wayfarer, if he be free;

Mehkoom  Ho Salik To Yehi Iss Ka ‘Hama Ost’
Khud Murda Wa Khud Marqad-O-Khud Marg-E-Mafajaat!

But if slave, then it all becomes his all is He;
he is dead body, grave and sudden death, all in one.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے