Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) (page 2)

بال جبریل (حصہ دوم)

Bal-i Jibril (Gabriel’s Wing) continues from Bang-i Dara. Some of the verses had been written when Iqbal visited Britain, Italy, Egypt, Palestine, France, Spain and Afghanistan.

The work contains 15 ghazals addressed to God and 61 ghazals and 22 quatrains dealing the ego, faith, love, knowledge, the intellect and freedom. The poet recalls the past glory of Muslims as he deals with contemporary political problems.

پوچھ اس سے کہ مقبول ہے فطرت کی گواہی

Pooch Iss Se K Maqbool Hai Fitrat Ki Gawahi

پوچھ اس سے کہ مقبول ہے فطرت کی گواہی تو صاحب منزل ہے کہ بھٹکا ہوا راہی کافر ہے مسلماں تو نہ شاہی نہ فقيری مومن ہے تو کرتا ہے فقيری ميں بھی شاہی کافر ہے تو شمشير پہ کرتا ہے بھروسا مومن ہے تو بے تيغ بھی لڑتا ہے …

Read More »

ہزار خوف ہو ليکن زباں ہو دل کی رفيق

Hazar Khof Ho Lekin Zuban Ho Dil Ki Rafeeq

ہزار خوف ہو ليکن زباں ہو دل کی رفيق يہی رہا ہے ازل سے قلندروں کا طريق ہجوم کيوں ہے زيادہ شراب خانے ميں فقط يہ بات کہ پير مغاں ہے مرد خليق علاج ضعف يقيں ان سے ہو نہيں سکتا غريب اگرچہ ہيں رازی کے نکتہ ہائے دقيق مريد …

Read More »

دل سوز سے خالی ہے ، نگہ پاک نہيں ہے

Dil Souz Se Khali Hai, Nigah Paak Nahin Hai

دل سوز سے خالی ہے ، نگہ پاک نہيں ہے پھر اس ميں عجب کيا کہ تو بے باک نہيں ہے ہے ذوق تجلی بھی اسی خاک ميں پنہاں غافل! تو نرا صاحب ادراک نہيں ہے وہ آنکھ کہ ہے سرم ہ افرنگ سے روشن پرکار و سخن ساز ہے …

Read More »

عشق سے پيدا نوائے زندگی ميں زير و بم

Ishq Se Paida Nawa’ay Zindagi Mein Zeer-O-Bamm

عشق سے پيدا نوائے زندگی ميں زير و بم عشق سے مٹی کی تصويروں ميں سوز وم بہ دم آدمی کے ريشے ريشے ميں سما جاتا ہے عشق شاخ گل ميں جس طرح باد سحر گاہی کا نم اپنے رازق کو نہ پہچانے تو محتاج ملوک اور پہچانے تو ہيں …

Read More »

مسلماں کے لہو ميں ہے سليقہ دل نوازی کا

Musalman Ke Lahoo Mein Hai, Saliqa Dil Nawazi Ka

کابل ميں    لکھے گئے مسلماں کے لہو ميں ہے سليقہ دل نوازی کا مسلماں کے لہو ميں ہے سليقہ دل نوازی کا مروت حسن عالم گير ہے مردان غازی کا شکايت ہے مجھے يا رب! خداوندان مکتب سے سبق شاہيں بچوں کو دے رہے ہيں خاکبازی کا بہت مدت کے …

Read More »

پھر چراغ لالہ سے روشن ہوئے کوہ و دمن

Phir Charagh-E-Lala Se Roshan Huway Koh-O-Daman

پھر چراغ لالہ سے روشن ہوئے کوہ و دمن مجھ کو پھر نغموں پہ اکسانے لگا مرغ چمن پھول ہيں صحرا ميں يا پرياں قطار اندر قطار اودے اودے ، نيلے نيلے ، پيلے پيلے پيرہن برگ گل پر رکھ گئی شبنم کا موتی باد صبح اور چمکاتی ہے اس …

Read More »

امين راز ہے مردان حر کی درويشی

Ameen-e-Raaz Hai Mardan-e-Hur Ki Darveshi

امين راز ہے مردان حر کی درويشی کہ جبرئيل سے ہے اس کو نسبت خويشی کسے خبر کہ سفينے ڈبو چکی کتنے فقيہ و صوفی و شاعر کی نا خوش انديشی نگاہ گرم کہ شيروں کے جس سے ہوش اڑ جائيں نہ آہ سرد کہ ہے گوسفندی و ميشی طبيب …

Read More »

وہ حرف راز کہ مجھ کو سکھا گيا ہے جنوں

Woh Harf-e-Raaz Ke Mujh Ko Sikha Gya Hai Junoon

وہ حرف راز کہ مجھ کو سکھا گيا ہے جنوں خدا مجھے نفس جبرئيل دے تو کہوں ستارہ کيا مری تقدير کی خبر دے گا وہ خود فراخی افلاک ميں ہے خوار و زبوں حيات کيا ہے ، خيال و نظر کی مجذوبی خودی کی موت ہے انديشہ ہائے گونا …

Read More »

يہ کون غزل خواں ہے پرسوز و نشاط انگيز

Ye Kon Ghazal Khawan Hai Pursouz-o-Nishat Angaiz

يہ کون غزل خواں ہے پرسوز و نشاط انگيز انديشہ دانا کو کرتا ہے جنوں آميز گو فقر بھی رکھتا ہے انداز ملوکانہ نا پختہ ہے پرويزی بے سلطنت پرويز اب حجرہ صوفی ميں وہ فقر نہيں باقی خون دل شيراں ہو جس فقر کی دستاويز اے حلقہ درويشاں ! …

Read More »

سما سکتا نہيں پہنائے فطرت ميں مرا سودا

Sama Sakta Nahin Pehna’ay Fitrat Mein Mera Soda

ا علےحضرتشہيد اميرالمومنين نادر شاہ غازی رحمتہ اللہ عليہ کے لطف و کرم سے نومبر1933ء ميں مصنف کو حکيم سنائی غزنوی رحمتہ اللہ عليہ کے مزار مقدس کی زيارت نصيب ہوئی – يہ چندافکار پريشاں جن ميں حکيم ہی کے ايک مشہور قصيدے کی پيروی کی گئی ہے ، اس …

Read More »