Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) / امين راز ہے مردان حر کی درويشی
Ameen-e-Raaz Hai Mardan-e-Hur Ki Darveshi

امين راز ہے مردان حر کی درويشی


امين راز ہے مردان حر کی درويشی
کہ جبرئيل سے ہے اس کو نسبت خويشی
کسے خبر کہ سفينے ڈبو چکی کتنے
فقيہ و صوفی و شاعر کی نا خوش انديشی
نگاہ گرم کہ شيروں کے جس سے ہوش اڑ جائيں
نہ آہ سرد کہ ہے گوسفندی و ميشی
طبيب عشق نے ديکھا مجھے تو فرمايا
ترا مرض ہے فقط آرزو کی بے نيشی
وہ شے کچھ اور ہے کہتے ہيں جان پاک جسے
يہ رنگ و نم ، يہ لہو ، آب و ناں کی ہے بيشی

———————–

Translation

Ameen-e-Raaz Hai Mardan-e-Hur Ki Darveshi
Ke Jibraeel (A.S.) Se Hai Iss Ko Nisbat-e-Khoweshi

Kise Khabar Ke Safinay Dobo Chuki Kitne
Faqeeh-o-Sufi-o-Shayar Ki Na-Khush Andeshi

Nigah-e-Garam Ke Sheron Ke Jis Se Hosh Urh Jaen
Na Aah-e-Sard Ke Hai Gosafandi-o-Maishi

Tabeeb-e-Ishq Ne Dekha Mujhe To Farmaya
Tera Marz Hai Faqat Arzoo Ki Be-Naishi

Woh Shay Kuch Aur Hai Kehte Hain Jaan-e-Paak Jise
Ye Rang-o-Nam, Ye Lahoo, Aab-o-Naa Ki Hai Baishi

——————————-

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے