Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) / مسلماں کے لہو ميں ہے سليقہ دل نوازی کا
Musalman Ke Lahoo Mein Hai, Saliqa Dil Nawazi Ka

مسلماں کے لہو ميں ہے سليقہ دل نوازی کا

کابل ميں    لکھے گئے

مسلماں کے لہو ميں ہے سليقہ دل نوازی کا

مسلماں کے لہو ميں ہے سليقہ دل نوازی کا
مروت حسن عالم گير ہے مردان غازی کا
شکايت ہے مجھے يا رب! خداوندان مکتب سے
سبق شاہيں بچوں کو دے رہے ہيں خاکبازی کا
بہت مدت کے نخچيروں کا انداز نگہ بدلا
کہ ميں نے فاش کر ڈالا طريقہ شاہبازی کا
قلندر جز دو حرف لاالہ کچھ بھی نہيں رکھتا
فقيہ شہر قاروں ہے لغت ہائے حجازی کا
حديث بادہ و مينا و جام آتی نہيں مجھ کو
نہ کر خارا شگافوں سے تقاضا شيشہ سازی کا
کہاں سے تونے اے اقبال سيکھی ہے يہ درويشی
کہ چرچا پادشاہوں ميں ہے تيری بے نيازی کا

———————–

Translation

Musalman Ke Lahoo Mein Hai, Saliqa Dil Nawazi Ka
Marawwat Husn-E-Alamgeer Hai Mardan-E-Ghazi Ka

Shikayat Hai Mujhe Ya Rab! Khudawand-E-Maktab Se
Sabaq Shaheen Bachon Ko De Rahe Hain Khaakbazi Ka

Bohat Muddat Ke Nakhcheeron Ka Andaz-E-Nigah Badla
Ke Main Ne Faash Kar Dala Tareeqah Shahbazi Ka

Qalander Juz Do Harf-E-LA ILAHA Kuch Bhi Nahin Rakhta
Faqeeh-E-Sheher Qaroon Hai Lighat-E-Ha’ay Hijazi Ka

Hadees-E-Badah-O-Meena-O-Jaam Ati Nahin Mujh Ko
Na Kar Khara Shighafon Se Taqaza Shisha Sazi Ka

Kahan Se Tu Ne Ae Iqbal Seekhi Hai Darveshi
Ke Charcha Padshahon Mein Hai, Teri Be-Niazi Ka

————————-

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے