Ye Sehar Jo Kabhi Farda Hai Kabhi Hai Amroz

صبح

بسم اللہ الرحمن الرحيم
صبح

يہسحر جو کبھی فردا ہے کبھی ہے امروز
نہيںمعلوم کہ ہوتی ہے کہاں سے پيدا
وہسحر جس سے لرزتا ہے شبستان وجود
ہوتیہے بندہ مومن کی اذاں سے پيدا
———————-

بھوپال (شيشمحل ) ميں لکھے گئے

 ————

Transliterations

                                                    

Subah

Ye Sehar Jo Kabhi Farda Hai Kabhi Hai Amroz
Nahin Maloom Ke Hoti Hai Kahan Se Paida

Woh Sehar Jis Se Larazta Hai Shabistan-e-Wujood
Hoti Hai Banda-e-Momin Ki Azan Se Paida

Bhopal (Sheesh Mehal) Mein Likhe Gye

————————-

 

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے