يہ نکتہ ميں نے سيکھا بوالحسن سے

يہ نکتہ ميں نے سيکھا بوالحسن سے
کہ جاں مرتی نہيں مرگ بدن سے
چمک سورج ميں کيا باقی رہے گی
اگر بيزار ہو اپنی کرن سے

————————-

Transliteration

Ye Nukta Main Ne Sikha Bu-Al-Hassan Se
Ke Jaan Marti Nahin Marg-e-Badan Se

The subtle point that life would not end with the death of the body
I learnt from Abul Hasan*:

*Abul Hasan Ash‘ari

Chamak Sooraj Mein Kya Baqi Rahe Gi
Agar Bezar Ho Apni Kiran Se!

The sun, if it would hate its beam
Will lose all its brilliance.

————————–

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے