پر ندے کی فر ياد

بچو ں کے لئے

آتا ہے ياد مجھ کو گزرا ہوا زمانا
وہ باغ کی بہاريں وہ سب کا چہچہانا
آزادياں کہاں وہ اب اپنے گھونسلے کی
اپنی خوشی سے آنا اپنی خوشی سے جانا
لگتی ہے چوٹ دل پر ، آتا ہے ياد جس دم
شبنم کے آنسوئوں پر کليوں کا مسکرانا
وہ پياری پياری صورت ، وہ کامنی سی مورت
آباد جس کے دم سے تھا ميرا آشيانا

آتی نہيں صدائيں اس کی مرے قفس ميں
ہوتی مری رہائی اے کاش ميرے بس ميں

کيا بد نصيب ہوں ميں گھر کو ترس رہا ہوں
ساتھی تو ہيں وطن ميں ، ميں قيد ميں پڑا ہوں
آئی بہار کلياں پھولوں کی ہنس رہی ہيں
ميں اس اندھيرے گھر ميں قسمت کو رو رہا ہوں

اس قيد کا الہی! دکھڑا کسے سنائوں
ڈر ہے يہيں قفسں ميں ميں غم سے مر نہ جاؤں

جب سے چمن چھٹا ہے ، يہ حال ہو گيا ہے
دل غم کو کھا رہا ہے ، غم دل کو کھا رہا ہے
گانا اسے سمجھ کر خوش ہوں نہ سننے والے
دکھے ہوئے دلوں کی فرياد يہ صدا ہے

آزاد مجھ کو کر دے ، او قيد کرنے والے!
ميں بے زباں ہوں قيدی ، تو چھوڑ کر دعا لے

————–

مشکل الفاط کے معنی

کہاں: مراد نہیں ہے، دل پر چوٹ لگنا: بہت دکھ پہنچنا، شبنم کے آنسو: اوس کے قطرے، مسکرانا: کھلنا،کامنی: حسین ونازک، مورت: صورت، شکل، آشیانا: گھونسلہ، قفس: پنجرہ، اے کاش: افسوس کہ، خدا کر تا کہ، بس: اختیار، ترسنا: ملنے کے شوق میں پھڑکنا، کلیوں کا ہنسنا: کلیوں کا کھلنا، قسمت کو رونا: مراد بد قسمتی پر دکھ کا اظہار کرنا، چھٹنا: دور ہونا،

————–

Transliteration

Parinde Ki Faryad

Bachon Ke Liye

Ata Hai Yaad Mujh Ko Guzra Huwa Zamana

Woh Bagh Ki Baharain, Woh Sub Ka Chehchana

Azadiyan Kahan Woh Ab Apne Ghonsle Ki

Apni Khushi Se Ana, Apni Khushi Se Jana

Lagti Hai Chot Dil Per, Ata Hai Yad Jis Dam

Shabnaam Ke Ansuon Per Kaliyon Ka Muskarana

Vo Payari Payari Soorat, Vo Kamni Si Moorat

Abad Jis Ke Dam Se Tha Mera Ashiyana

Ati Nahin Sadaen Uss Ki Mere Qafas Mein

Hoti Meri Rehai Ae Kash Mere Bus Mein!

Kya Badnaseeb Hun Mein Ghar Ko Taras Raha Hun

Sathi To Hain Watan Mein, Main Qaid Mein Para Hun

Ayi Bahar, Kaliyan Phoolon Ki Hans Rahi Hain

Mein Iss Andhere Ghar Mein Kismat Ko Ro Raha Hun

Iss Qaid Ka Elahi! Dukhra Kise Sunaun

Der Hai Yahin Qafas Mein Main Gham Se Mer Na Jaun

Jab Se Chaman Chuta Hai, Ye Haal Ho Gya Hai

Dil Gham Ko Kha Raha Hai, Gham Dil Ko Kha Raha Hai

Gana Issay Samajh Ker Khush Hon Na Sunne Wale

Dukhe Huwe Dilon Ki Faryad Ye Sada Hai

Azad Mujh Ko Ker De, O Qaid Kerne Wale!

Main Bezuban Hun Qaidi, Tu Chor Ker Dua Le

——————–

THE BIRD’S COMPLAINT
(For Children)

I am constantly reminded of the bygone times
Those garden’s springs, those chorus of chimes

Gone are the freedoms of our own nests
Where we could come and go at our own pleasure

My heart aches the moment I think
Of the buds’ smile at the dew’s tears

That beautiful figure, that Kamini’s form
Which source of happiness in my nest did form

I do not hear those lovely sounds in my cage now
May it happen that my freedom be in my own hands now!

How unfortunate I am, tantalized for my abode I am
My companions are in the home‐land, in the prison I am

Spring has arrived, the flower buds are laughing
On my misfortune in this dark house I am wailing

O God, To whom should I relate my tale of woe?
I fear lest I die in this cage with this woe (grief)!

Since separation from the garden the condition of my heart is such
My heart is waxing the grief, my grief is waxing the heart

O Listeners, considering this music do not be happy
This call is the wailing of my wounded heart

O the one who confined me make me free
A silent prisoner I am, earn my blessings free

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے