Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) / تو اے اسير مکاں! لامکاں سے دور نہيں
Tu Ae Aseer-E-Makan! La-Makan Se Door Nahin

تو اے اسير مکاں! لامکاں سے دور نہيں


تو اے اسير مکاں! لامکاں سے دور نہيں
وہ جلوہ گاہ ترے خاک داں سے دور نہيں
وہ مرغزار کہ بيم خزاں نہيں جس ميں
غميں نہ ہو کہ ترے آشياں سے دور نہيں
يہ ہے خلاصہ علم قلندری کہ حيات
خدنگ جستہ ہے ليکن کماں سے دور نہيں
فضا تری مہ و پرويں سے ہے ذرا آگے
قدم اٹھا ، يہ مقام آسماں سے دور نہيں
کہے نہ راہ نما سے کہ چھوڑ دے مجھ کو
يہ بات راہرو نکتہ داں سے دور نہيں

———————

Translation

Tu Ae Aseer-E-Makan! La-Makan Se Door Nahin
Woh Jalwagah Tere Khakdan Se Door Nahin

Woh Marghzar Ke Beem-E-Khazan Nahin Jis Mein
Ghameen Na Ho Ke Tere Ashiyan Se Door Nahin

Ye Hai Khulasa-E-Ilm Qalandari Ke Hiyat
Khadang-E-Jasta Hai Lekin Kaman Se Door Nahin

Faza Teri Mah-O-Parveen Se Hai Zara Agay
Qadam Uthao, Ye Maqam Asman Se Door Nahin

Kahe Na Rahnuma Se Ke Chor De Mujh Ko
Ye Baat Rahroo Nukta Dan Se Door Nahin

————————-

O Prisoner of Space! You are not far from the Placeless Realm—
That Audience Hall is not far away from your planet.

Grieve not, for a meadow that faces no threat
from the Autumn, is not far away from your nest.

The gist of all Gnostic knowledge is merely this:
That life is an arrow spent and yet from the bow it is not too far!

Your station lies a little ahead of all the stars and Pleiades:
Move on, for it is not a long way from the skies.

Lest he asks the guide to let him be!
It would be no surprise from a traveler who thinks too much.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے