Agarcha Zar Bhi Jahan Mein Hai Qazi-Ul-Hajat

مسلمان کا زوال

اگرچہ زر بھی جہاں ميں ہے قاضی الحاجات
جو فقر سے ہے ميسر، تو نگری سے نہيں
اگر جواں ہوں مری قوم کے جسور و غيور
قلندری مری کچھ کم سکندری سے نہيں
سبب کچھ اور ہے، تو جس کو خود سمجھتا ہے
زوال بندہ مومن کا بے زری سے نہيں

اگر جہاں ميں مرا جوہر آشکار ہوا
قلندری سے ہوا ہے، تو نگری سے نہيں

 ———————-

Transliterations

Musalman Ka Zawal

Agarcha Zar Bhi Jahan Mein Hai Qazi-Ul-Hajat
Jo Faqar Se Hai Mayassar, Toungari Se Nahin

Agar Jawan Hon Meri Qoum Ke Jasoor-o-Ghayyoor
Qalandari Meri Kuch Kam Sikandari Se Nahin

Sabab Kuch Aur Hai, Tu Jis Ko Khud Samajhta Hai
Zawal Banda-e-Momin Ka Be-Zarri Se Nahi

Agar Jahan Mein Jouhar Aashkara Huwa
Qalandari Se Huwa Hai, Toungari Se Nahin

————–

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے