Jab Tak Na Zindagi Ke Haqaeeq Pe Ho Nazar

ناظرين سے

ناظرین سے

جب تک نہ زندگی کے حقائق پہ ہو نظر
تیرا زُجاج ہو نہ سکے گا حریفِ سنگ
یہ زورِ دست و ضربتِ کاری کا ہے مقام
میدانِ جنگ میں نہ طلب کر نوائے چنگ
خُونِ دل و جگر سے ہے سرمایہ حیات
فطرت، لہُو ترنگ، ہے غافل! نہ، جل ترنگ


Nazreen Se
To Readers

Jab Tak Na Zindagi Ke Haqaeeq Pe Ho Nazar
Tera Zujaj Ho Na Sake Ga Hareef-e-Sang

Your glass can never match the stony rock,
Unless of facts with care you take the stock.

Ye Zor-e-Dast-o-Zarbat-e-Kari Ka Hai Maqam
Maidan-e-Jang Mein Na Talab Kar Nawa-e-Chang

Give proof of strength and strike a dreadful blow,
When war is waging strains of harp forego.

Khoon-e-Dil-o-Jigar Se Hai Sarmaya-e-Hayat
Fitrat ‘Lahoo Tarang’ Hai Ghafil! Na ‘Jal Tarang’

The wealth of life is due to blood in veins,
O man remiss! love pain, shun melodious strains.

 

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے