شمع و پروانہ


پروانہ تجھ سے کرتا ہے اے شمع پيار کيوں
يہ جان بے قرار ہے تجھ پر نثار کيوں
سيماب وار رکھتی ہے تيری ادا اسے
آداب عشق تو نے سکھائے ہيں کيا اسے؟
کرتا ہے يہ طواف تری جلوہ گاہ کا
پھونکا ہوا ہے کيا تری برق نگاہ کا؟
آزار موت ميں اسے آرام جاں ہے کيا؟
شعلے ميں تيرے زندگی جاوداں ہے کيا؟
غم خانہ جہاں ميں جو تيری ضيا نہ ہو
اس تفتہ دل کا نخل تمنا ہرا نہ ہو
گرنا ترے حضور ميں اس کی نماز ہے
ننھے سے دل ميں لذت سوز و گداز ہے
کچھ اس ميں جوش عاشق حسن قديم ہے
چھوٹا سا طور تو يہ ذرا سا کليم ہے

پروانہ ، اور ذوق تماشائے روشنی
کيڑا ذرا سا ، اور تمنائے روشنی

———–

جان بیقرار: محبت کے سبب بے چین روح، سیماب وار: پارے کی طرح، مراد ہر گھڑی بے چین، جلوہ گاہ: مراد روشنی کی جگہ، پھونکا ہوا: جلا یاہوا، برق نگاہ: نگاہوں کی بجلی، آزار: تکلیف، دکھ، آرام جاں: روح کا سکون، زندگی جاوداں: ہمیشہ ہمیشہ کی زندگی، غم خانہ جہاں: مراد یہ دنیا جو دکھوں کا گھر ہے، تفتہ دل: جس کا دل جلا ہو، مراد عاشق، نخل تمنا: خواہش کا درخت، ہراہونا: سرسبز ہونا، مراد آرزو پوری ہونا، حضور: خدمت، لذت سوزوگداز: عشق کی تپش اور گرمی کامزہ، حسن قدیم: مراد محبوب حقیقی کا حسن و جمال، کلیم: مراد حضرت موسی جیسا، تماشائے روشنی: روشنی دیکھنے کا عمل

———–

Transliteration

Shama-o-Parwana

 

Parwana Tujh Se Karta Hai Ae Shama! Pyar Kyun

Ye Jaan-e-Be-Qarar Hai Tujh Par Nisar Kyun

  

Seemabwaar Rakhti Hai Teri Ada Isse

Adab-e-Ishq Tu Ne Sikhaye Hain Kya Isse?

  

Karta Hai Ye Tawaf-e-Teri Jalwagah Ka

Phoonka Huwa Hai Kya Teri Barq-e-Nigah Ka?

  

Azaar-e-Mout Mein Isse Aram-e-Jaan Hai Kya?

Shaole Mein Tere Zindagi-e-Javidan Hai Kya?

  

Ghumkhana-e-Jahan Mein Jo Teri Zia Na Ho

Iss Tafta Dil Ka Nakhle-e-Tamana Hara Na Ho

  

Girna Tere Huzoor Mein Iss Ki Namaz Hai

Nanhe Se Dil Mein Lazzat-e-Souz-o-Gudaz Hai

  

Kuch Iss Mein Josh-e-Ashiq-e-Husn-e-Qadeem Hai

Chota Sa Toor Tu, Ye Zara Sa Kaleem Hai

  

Parwana, Aur Zauq-e-Tamashaye Roshni

Keera Zara Sa, Aur Tamanaye Roshni!

———————

Moth And Candle

Why is the moth your lover, O flame,
Giving life in a yielding move?

You make its ways the quicksilver’s ways.
You taught it, what rites of love?

The creature circles around your flare.
How burnt in your flash of sight!

Does it know life’s peace in the throes of death?
Life endures in your ardour bright?

Had your lustre not been in the world’s house of woe
The tree of hot love had not been green.

Moth sinks before you making its prayer,
Frail heart to feel scorching keen.

It must throb like one loving the beauty of old:
Small prophet! small mountain of fire!

The moth with its urge to envisage the flame!
Poor worm, with its light’s desire!

 

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے