Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ اول) / ميری نوائے شوق سے شور حريم ذات ميں

ميری نوائے شوق سے شور حريم ذات ميں

ميری نوائے شوق سے شور حريم ذات ميں
غلغلہ ہائے الاماں بت کدۂ صفات ميں
حور و فرشتہ ہيں اسير ميرے تخيلات ميں
ميری نگاہ سے خلل تيری تجليات ميں
گرچہ ہے ميری جستجو دير و حرم کی نقش بند
ميری فغاں سے رستخيز کعبہ و سومنات ميں
گاہ مری نگاہ تيز چير گئی دل وجود
گاہ الجھ کے رہ گئی ميرے توہمات ميں
تو نے يہ کيا غضب کيا، مجھ کو بھی فاش کر ديا
ميں ہی تو اک راز تھا سينۂ کائنات ميں

———————-

TRANSLITRATION

Meri Nawa-e-Shauk Se Shor Hareem-e-Zaat Mein

Meri Nawa’ay Shauq Se Shor Hareem-e-Zaat Mein
Ghalghala Ha’ay Al-Aman But Kada’ay Sifaat Mein

Hoor-o-Farishta Hain Aseer Mere Takhiyulat Mein
Meri Nigah Se Khalal Teri Tajaliat Mein

Garche Hai Meri Justujoo Dair-e-Haram Ki Naqsh Band
Meri Faghan Se Rustkhaiz Kaaba-O-Somanat Mein

Gah Meri Nigah-e-Taiz Cheer Gyi Dil-e-Wujood
Gah Uljah Ke Reh Gyi Meri Touwahamaat Mein

Tu Ne Ye Kya Ghazab Kiya, Mujh Ko Bhi Fash Kar Diya
Main Hi Tou Aik Raaz Tha Sina’ay Kainat Mein !

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

One comment

  1. I like this Nazam “Meri Nawa-e-Shauk Se Shor Hareem-e-Zaat Mein”. Thanks for Sharing.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے