Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) / فطرت نے نہ بخشا مجھے انديشہ چالاک

فطرت نے نہ بخشا مجھے انديشہ چالاک


فطرت نے نہ بخشا مجھے انديشہ چالاک
رکھتی ہے مگر طاقت پرواز مری خاک
وہ خاک کہ ہے جس کا جنوں صيقل ادراک
وہ خاک کہ جبريل کی ہے جس سے قبا چاک
وہ خاک کہ پروائے نشيمن نہيں رکھتی
چنتی نہيں پہنائے چمن سے خس و خاشاک
اس خاک کو اللہ نے بخشے ہيں وہ آنسو
کرتی ہے چمک جن کی ستاروں کو عرق ناک

—————————

TRANSLATION

Fitrat Ne Na Bakhsha Mujhe Andaisha-e-Chalaak
Rakhti Hai Magar Taqat-e-Parwaz Meri Khak

On me no subtle brain though Nature spent,
My dust hides strength to dare the high ascent—

Woh Khak Ke Hai Jis Ka Junoon Saqeel-e-Idraak
Woh Khak Ke Jibreel Ki Hai Jis Se Qaba Chaak

That frantic dust whose eye outranges reason,
Dust by whose madness Gabriel’s rose is rent;

Woh Khak Ke Parwaye Nasheeman Nahin Rakhti
Chunti Nahin Pehnaye Chaman Se Khs-o-Khashak

That will not creep about its garden gathering
Straw for a nest—un‐housed and yet content.

Iss Khak Ko Allah Ne Bakhse Hain Woh Ansu
Karti Hai Chamak Jin Ki Sitaron Ko  Arq-Naak

And Allah to this dust a gift of tears
Whose brightness shames the constellations, lent.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے