با ل جبر یل - رباعيات

چمن ميں رخت گل شبنم سے تر ہے

چمن ميں رخت گل شبنم سے تر ہے
سمن ہے ، سبزہ ہے ، باد سحر ہے
مگر ہنگامہ ہو سکتا نہيں گرم
يہاں کا لالہ بے سوز جگر ہے

——————–

Transliteration

Chaman Mein Rakht-e-Gul Se Tar Hai
Saman Hai, Sabza Hai, Bad-e-Sehar Hai

Dew‐drops glisten on flowers that bloom in the spring;
The breeze, the jasmine, and the rose have failed

Magar Hangama Ho Sakta Nahin Garam
Yahan Ka Lala Be-Souz-e-Jigar Hai

To raise the tumult of joy and liveliness,
For flowers here lack the spark and fire of life

————————–

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button