شمع


بزم جہاں ميں ميں بھی ہوں اے شمع! دردمند
فرياد در گرہ صفت دانہ سپند
دی عشق نے حرارت سوز دروں تجھے
اور گل فروش اشک شفق گوں کيا مجھے

ہو شمع بزم عيش کہ شمع مزار تو
ہر حال اشک غم سے رہی ہمکنار تو

يک بيں تری نظر صفت عاشقان راز
ميری نگاہ مايہ آشوب امتياز
کعبے ميں ، بت کدے ميں ہے يکساں تری ضيا
ميں امتياز دير و حرم ميں پھنسا ہوا

ہے شان آہ کی ترے دود سياہ ميں
پوشيدہ کوئی دل ہے تری جلوہ گاہ ميں؟

جلتی ہے تو کہ برق تجلی سے دور ہے
بے درد تيرے سوز کو سمجھے کہ نور ہے
تو جل رہی ہے اور تجھے کچھ خبر نہيں
بينا ہے اور سوز دروں پر نظر نہيں
ميں جوش اضطراب سے سيماب وار بھی
آگاہ اضطراب دل  بے قرار بھی

تھا يہ بھی کوئی ناز کسی بے نياز کا
احساس دے ديا مجھے اپنے گداز کا

يہ آگہی مری مجھے رکھتی ہے بے قرار
خوابيدہ اس شرر ميں ہيں آتش کدے ہزار
يہ امتياز رفعت و پستی اسی سے ہے
گل ميں مہک ، شراب ميں مستی اسی سے ہے

بستان و بلبل و گل و بو ہے يہ آگہی
اصل کشاکش من و تو ہے يہ آگہی

صبح ازل جو حسن ہوا دلستان عشق
آواز ‘کن’ ہوئی تپش آموز جان عشق
يہ حکم تھا کہ گلشن ‘کن’ کی بہار ديکھ
ايک آنکھ لے کے خواب پريشاں ہزار ديکھ
مجھ سے خبر نہ پوچھ حجاب وجود کی
شام فراق صبح تھی ميری نمود کی
وہ دن گئے کہ قيد سے ميں آشنا نہ تھا
زيب درخت طور مرا آشيانہ تھا
قيدی ہوں اور قفس کو چمن جانتا ہوں ميں
غربت کے غم کدے کو وطن جانتا ہوں ميں

ياد وطن فسردگی بے سبب بنی
شوق نظر کبھی ، کبھی ذوق طلب بنی

اے شمع! انتہائے فريب خيال ديکھ
مسجود ساکنان فلک کا مآل ديکھ
مضموں فراق کا ہوں ، ثريا نشاں ہوں ميں
آہنگ طبع ناظم کون و مکاں ہوں ميں
باندھا مجھے جو اس نے تو چاہی مری نمود
تحرير کر ديا سر ديوان ہست و بود
گوہر کو مشت خاک ميں رہنا پسند ہے
بندش اگرچہ سست ہے ، مضموں بلند ہے
چشم غلط نگر کا يہ سارا قصور ہے
عالم ظہور جلوہ ذوق شعور ہے
يہ سلسلہ زمان و مکاں کا ، کمند ہے
طوق گلوئے حسن تماشا پسند ہے
منزل کا اشتياق ہے ، گم کردہ راہ ہوں
اے شمع ! ميں اسير فريب نگاہ ہوں
صياد آپ ، حلقہ دام ستم بھی آپ
بام حرم بھی ، طائر بام حرم بھی آپ!
ميں حسن ہوں کہ عشق سراپا گداز ہوں
کھلتا نہيں کہ ناز ہوں ميں يا نياز ہوں

ہاں ، آشنائے لب ہو نہ راز کہن کہيں
پھر چھڑ نہ جائے قصہ دار و رسن کہيں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مشکل الفاظ کے معنی

بزم جہاں: مراد دنیا، فریاددرگرہ: مراد ہروقت فریاد پر تیار، دانہ سپند: ہرمل، وہ دانہ جسے آگ پر ڈالیں تو چٹخنے لگتاہے، سوزدورں: جذبئہ عشق کی گرمی، گل فروش اشک شفق گوں: شفق کی طرح سرخ آنسوؤں کے پھول بیچنے والا، یعنی محبوب سے دوری کے سبب خون کے آنسو رونے والا، بزم عشق: مراد خوشیوں کی محفل، ہمکنار رہنا: بغلگیر/ ساتھ ساتھ، یک بیں: مراد ہر جگہ ایک ہی طرح روشنی دینے والا، عاشقان راز: بھید/حقیقت کے عاشق، مائہ آشوب امتیاز: تفریق پیدا کرنے کے فتنے کا سبب، دیر و حرم: مندر ارو کعبہ، ہندو اور مسلمان، آہ کی شان: مراد آہ کی سی کیفیت، دود سیاہ: کالا دھواں، جلوہ گاہ: مراد روشنی کی جگہ، برق تجلی: جلوہ کی بجلی مراد محبوب حقیقی کا جلوہ، سوز: جلنے کی حالت، بینا: نظر والی، سوز دروں: عشق کے سبب دل کی تپش، جوش اضطراب: سخت بے چینی کی حالت، سیماب وار: پارے کی طرح، بے نیاز: یعنی محبوب حقیقی جو کسی کا محتاج نہیں، گداز: پگھلنے یعنی عشق میں گھلنے کی حالت، خوابیدہ: سوئے ہوئے، شرر: چنگاری، آتشکدے: جمع آتش کدہ، آتش پرستوں کی عبادت گاہیں، رفعت: بلندی، بستان؛ بوستان، باغ، اصل: بنیاد، جڑ، کشاکش: کھینچاتانی، من و تو: میں اور تو، دلستان: دل لینے / چھیننے والا، صحبح ازل: کائنات کے وجود میں آنے سے بھی پہلے کی صج، آواز ”کن”: ہوجاکی آواز، قرآں کریم کی آیت ہے کہ خدا جب کسی چیز کو پیدا کرنا چاہتاہے تو فرماتا ہے ہوجا تووہ پیدا ہوجاتی ہے، گلشن کن: یہ دنیا، فسردگی: افسردگی، اداسی، فریب جال: یعنی غلط فہمی، مسجود: جسے سجدہ کیا جائے، ساکنان: جمع ساکن، رہنے والے، مآل: انجام، فراق کا مضمون: مراد انسان جو اصل سے جدا ہے، ثریا نشان: یعنی ثریا(خاص ستارہ) کی طرح بلند لیکن دور، ایسامضمون جو سمجھ سے باہر ہے، آہنگ طبع ناظم کون و مکاں: دنیا کی نظم لکھنے والے، یعنی تنظیم کرنے والے کی طبیعت کی لے، باندھا: یعنی مضمون پیدا کیا، انسان کو تخلیق کیا، سر دیوان ہست بود: کا‎ئنات کے دیوان (شعروں کا مجموعہ) کے شروع میں، گوہر: موتی، روح، مشت خاک: مٹی کی مٹھی، انسانی جسم، بندش: شعرمیں الفاظ کا استعمال، مضمون بلند ہونا: شعر میں بیان کردہ مضمون عمدہ ہونا، چشم غلط نگر: حقیقت کو صحیح طور پر نہ دیکھنے والی نگاہ/ آنکھ ، عالم: دنیا، ظہور: ظاہر ہونے کی حالت، جلوہ ذوق شعور: فہم اور سمجھ بوجھ کے ذوق/شوق کی تجلی، زمان و مکاں: کائنات، کمند: رسی کا پھندا، طوق گلوئے حسن: حسن کے گلے/گردن کا طوق، تماشا پسند: دلچسپ چیزوں کو دیھکنے کا شوقین، منزل: عالم بالا جوانسان کا اصل ٹھکانہ ہے، گم کردہ راہ: راستہ بھولا، بھٹکا ہوا، فریب نگاہ: نظر کا 

 

————–

 

Transliteration

 

Shama

Bazm-e-Jahan Mein Main Bhi Hun Ae Shama! Dardmand
Faryad Dar Gira Sift-e-Dana-e-Sapand

Di Ishq Ne Hararat-e-Souz-e-Duron Tujhe
Aur Gul Farosh-e-Ashak-e-Shafaq-Goon Kiya Mujhe

Ho Shama-e-Bazm-e-Aysh Ke Shama-e-Mazar Tu
Har Haal Ashak-e-Gham Se Rahi Humkinar Tu

Yak Been Teri  Nazar Sift-e-Ashiqan-e-Raaz
Meri Nigah Maya-e-Ashob-e-Imtiaz

Kaabe Mein, Bukade Mein Hai Yaksaan Teri Zia
Main Imtiaz-e-Dair-o-Haram Mein Phansa Huwa

Hai Shan Aah Ki Tere Dood-e-Siyah Mein
Poshida Koi Dil Hai Teri Jalwagah Mein?

Jalti Hai Tu Ke Barq-e-Tajalli Se Door Hai
Be-Dard Tere Souz Ko Samjhe Ke Noor Hai

Tu Jal Rahi Hai Aur Tujhe Kuch Khabar Nahin
Beena Hai Aur Souz-e-Darun Par Nazar Nahin

Main Josh-e-Iztirab Se Seemabdar Bhi
Agah-e-Iztirab-e-Dil-e-Beqarar Bhi

Tha Ye Bhi Koi Naaz Kisi Be Niaz Ka
Ehsas De Diya Mujhe Apne Gudaz Ka

Ye Aghi Meri Mujhe Rakhti Hai Be-Qarar
Khawabida Iss Sharar Mein Hain Atish Kade Hazar

Ye Imtiaz-e-Riffat-o-Pasti Issi Se Hai
Gul Mein Mehak, Sharab Mein Masti Issi Se Hai

Bustan-o-Bulbul-o-Gul-o-Bu Hai Ye Aghi
Asal-e-Kashakash-e-Man-o-Tu Hai Ye Aghi

Subah-e-Azal Jo Husn Huwa Dilstan-e-Ishq
Awaz-e-‘KUN’ Huwi Tapish Amoz-e-Jaan-e-Ishq

Ye Hukm Tha Ke Gulshan-e-‘KUN’ Ki Bahar Dekh
Aik Ankh Le Ke Khawab-e-Pareshan Hazar Dekh

Mujh Se Khabar Na Puch Hijab-e-Wujood Ki
Sham-e-Firaq Subah Thi Meri Namood Ki

Woh Din Gye Ke Qaid Se Main Ashna Na Tha
Ziab-e-Darakht-e-Toor Mera Ashiyana Tha

Qaidi Hun Aur Qafas Ko Chaman Janta Hun Main
Ghurbat Ke Ghamkade Ko Watan Janta Hun Main

Yaad-e-Watan Fasurdagi-e-Be-Sabab Bani
Shauq-e-Nazar Kabhi, Kabhi Zauq-e-Talab Bani

Ae Shama! Intihaye Faraib-e-Khiyal Dekh
Masjood-e-Sakinan-e-Falak Ka Maal Dekh

Mazmoon Firaaq Ka Hun, Sureya Nishan Hun Main
Ahang-e-Taba-e-Nazim-e-Kaun-o-Makan Hun Main

Bandha Mujhe Jo Uss Ne To Chahi Meri Namood
Tehreeh Kar Diya Sir-e-Diwan-e-Hast-o-Bood

Gohar Ko Musht-e-Khak Mein Rehna Pasand Hai
Bandish Agarche Sust Hai, Mazmoon Buland Hai

Chashm-e-Ghalat Nigar Ka Ye Sara Qasoor Hai
Alam-e-Zahoor-e-Jalwa-e-Zauq-e-Shaur Hai

Ye Silsila Zaman-o-Makan Ka, Kumand Hai
Tauq-e-Gulooye Husn-e-Tamasha Pasand Hai

Manzil Ka Ishtiaq Hai, Gum Karda Rah Hun
Ae Shama! Main Aseer-e-Faraib-e-Nigah Hun

Sayyad App, Halqa-e-Daam-e-Sitam Bhi App
Baam-e-Haram Bhi, Taeer-e-Baam-e-Haram Bhi App!

Main Husn Ke Ishq-e-Sarapa Gudaz Hun
Khulta Nahin Ke Naaz Hun Main Ya Niaz Hun

Haan, Ashnaye Lab Ho Na Raaz-e-Kuhan Kahin
Phir Chir Na Jaye Qissa-e-Daar-o-Rasan Kahin

———————–

The Candle

O Candle! I am also an afflicted person in the world assembly
Constant complaint is my lot in the manner of the rue

O Candle! I am also an afflicted person in the world assembly
Constant complaint is my lot in the manner of the rue

Whether you be the candle of a celebrating assembly or one at the grave
In every condition associated with the tears of sorrow you remain

Your eye views all with equity like the Secret’s Lovers
My eye is the pride of the tumult of discrimination

Your illumination is alike in the Ka’bah and the temple
I am entangled in the temple and the Haram’s discrimination

Your black smoke contains the sigh’s elegance
Is some heart hidden in the place of your manifestation?

You burn with pathos due to distance from Tajalli’s Light
Your pathos the callous ones consider your light

Though you are burning you are unaware of it all
You see but do not encompass the internal pathos

I quiver like mercury with the excitement of vexation
As well I am aware of vexations of the restless heart

This was also the elegance of some Beloved
Which gave me perception of my own pathos

This cognition of mine keeps me restless
Innumerable fire temples are asleep in this spark

Discrimination between high and low is created by this alone!
Fragrance in flower, ecstasy in wine is created by this alone!

Garden, nightingale, flower, fragrance this Cognition is
Root of the struggle of ‘I and you’ this Cognition is

At creation’s dawn as Beauty became the abode of Love
The sound of “Kun” taught warmth to the spirit of Love

The command came Beauty of Kun’s garden to witness
With one eye a thousand dreadful dreams to witness

Do not ask me of the nature of the veil of being
The eve of separation was the dawn of my being

Gone are the days when unaware of imprisonment I was
That my abode the adornment of the tree of Tur was

I am a prisoner but consider the cage to be a garden
This exile’s hovel of sorrow I consider the homeland

Memories of the homeland a needless melancholy became
Now the desire for sight, now Longing for search became

O Candle! Look at the excessive illusion of thought
Look at the end of the one worshipped by celestial denizens

Theme of separation I am, the exalted one I am
Design of the Will of the Universe’s Lord I am

He desired my display as He designed me
When at the head of Existence’ Divan He wrote me

The pearl likes living in a handful of dust
Style may be dull the subject is excellent

Not seeing it rightly is the fault of shortsighted perception
The universe is the show of effulgence of taste for Cognizance

This network of time and space is the scaling ladder of the Universe
It is the necklace of the neck of Eternal Beauty

I have lost the way, Longing for the goal I am
O Candle! Captive of perception’s illusion I am

I am the hunter as well as the circle of tyranny’s net!
I am the Haram’s roof as well as the bird on Haram’s roof

Am I the Beauty or head to foot the melting love am I?
It is not clear whether the beloved or the Lover am I?

I am afraid the old secret may come up to my lips again
Lest story of suffering on the Cross may come up again.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے