Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ اول) / اپنی جولاں گاہ زير آسماں سمجھا تھا ميں

اپنی جولاں گاہ زير آسماں سمجھا تھا ميں


اپنی جولاں گاہ زير آسماں سمجھا تھا ميں
آب و گل کے کھيل کو اپنا جہاں سمجھا تھا ميں
بے حجابی سے تری ٹوٹا نگاہوں کا طلسم
اک ردائے نيلگوں کو آسماں سمجھا تھا ميں
کارواں تھک کر فضا کے پيچ و خم ميں رہ گيا
مہروماہ و مشتری کو ہم عناں سمجھا تھا ميں
عشق کی اک جست نے طے کر ديا قصہ تمام
اس زمين و آسماں کو بے کراں سمجھا تھا ميں
کہہ گئيں راز محبت پردہ دار يہاے شوق
تھی فغاں وہ بھی جسے ضبط فغاں سمجھا تھا ميں
تھی کسی درماندہ رہرو کی صداے درد ناک
جس کو آواز رحيل کارواں سمجھا تھا ميں

————————————-

Translation

Apni Jolangah Zair-e-Asman Samjha Tha Mein
Aab-o-Gil Ke Khail Ko Apna Jahan Samjha Tha Mein

Behijabi Se Teri Toota Nigahon Ka Tilism
Ek Rida’ay Neelgoon Ko Asman Samjha Tha Mein

Karwan Thak Kar Faza Ke Paich-o-Kham Mein Reh Gya
Meher-o-Mah-o-Mushtari Ko Hum Ana Samjha Tha Mein

Ishq Ki Ek Jast Ne Tay Kar Diya Qissa Tamam
Iss Zameen-o-Asman Ko Be-Karan Samjha Tha Mein

Keh Gayen Raaz-e-Mohabbat Parda-Dari-e-Haye Shauq
Thi Faghan Who Bhi Jise Zabt-e-Faghan Samjha Tha Mein

Thi Kisi Darmanda Rehro Ki Sada’ay Dardnaak
Jis Ko Awaz-e-Raheel-e-Karwan Samjha Tha Mein

———————-

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے