آفتاب


۔(ترجمہ گایتری)

اے آفتاب! روح و روان جہاں ہے تو
شيرازہ بند دفتر کون و مکاں ہے تو
باعث ہے تو وجود و عدم کی نمود کا
ہے سبز تيرے دم سے چمن ہست و بود کا
قائم يہ عنصروں کا تماشا تجھی سے ہے
ہر شے ميں زندگی کا تقاضا تجھی سے ہے
ہر شے کو تيری جلوہ گری سے ثبات ہے
تيرا يہ سوز و ساز سراپا حيات ہے
وہ آفتاب جس سے زمانے ميں نور ہے
دل ہے ، خرد ہے ، روح رواں ہے ، شعور ہے
اے آفتاب ، ہم کو ضيائے شعور دے
چشم خرد کو اپنی تجلی سے نور دے
ہے محفل وجود کا ساماں طراز تو
يزدان ساکنان نشيب و فراز تو
تيرا کمال ہستی ہر جاندار ميں
تيری نمود سلسلہ کوہسار ميں
ہر چيز کی حيات کا پروردگار تو
زائيدگان نور کا ہے تاجدار تو

نے ابتدا کوئی نہ کوئی انتہا تری
آزاد قيد اول و آخر ضيا تری

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مشکل الفاظ کے معنی

گایتری: ہندؤں کی مقدس کتاب رگ وید کی ایک بہت قدیم اور مشہور دعا، روح واں: مراد جس پر انسانی زندگی کا دارومدار ہے، شیرازہ بند: مراد کائنات کے انتظام کو مضبوط بنانے والا، دفتر کون و مکاں: مراد یہ کائنات جس مختلف جز ہیں، باعث: وجہ، نمود: ظاہر ہونے کی حالت، ہست و بود: کائنات، دنیا، تقاضا: صلاحیت، اہلیت، جلوہ گری: ظاہر ہونے کی کیفیت، ثبات: مراد زندگی، سوز وساز: مراد تپش اور گرمی، ضیائے شعور: سمجھ بوجھ کی روشنی، محفل وجود: مراد کائنات، سامان طراز: مراد انتظام/بندوبست کرنے والا، یزداں: قدیم ایرانیوں کے مطابق نیکی کا خدا، نشیب و فراز: مراد زمین اور اوپر کی دنیا، ہستی: زندگی، سلسلہ کوہسار: پہاڑوں کی قطار، پروردگار: پالنے والا، زائیدگان نور: روشنی سے پیدا ہونے والے، ہندؤں کے دیوتا، تاجدار: بادشاہ، قیداول و آخر: یعنی ابتدا اور انتہا کی پابندی،

—————–

Transliteration

Aftab
(Tarjuma Gayatri)

 

Ae Aftab! Rooh-o-Rawan-e-Jahan Hai Tu
Shiraza Band-e-Daftar-e-Kaun-o-Makan Hai Tu

Baees Hai Tu Wujood-o-Adam Ki Namood Ka
Hai Sabz Tere Dam Se Chaman Hast-o-Bood Ka

Qaeem Ye Unsaron Ka Tamasha Tujhi Se Hai
Har Shay Mein Zindagi Ka Taqaza Tujhi Se Hai

Har Shay Ko Teri Jalwagari Se Sabat Hai
Tera Ye Souz-o-Saaz Sarapa Hayat Hai

Woh Aftab Jis Se Zamane Mein Noor Hai
Dil Hai, Khird Hai, Rooh-e-Rawan Hai, Shaur Hai

Ae Aftab! Hum Ko Zia-e-Shaur De
Chashm-e-Khird Ko Apni Tajalli Se Noor De

Hai Mehfil-e-Wujood Ka Saman Taraz Tu
Yazdan-e-Sakinan-e-Nashaib-o-Faraz Tu

Tera Kamal Hasti-e-Har Jandar Mein
Teri Namood Silsila-e-Kohsar Mein

Har Cheez Ki Hayat Ka Parwardigar Tu
Zaeedgan-e-Noor Ka Hai Tajdar Tu

Ne Ibtida Koi Na Koi Intiha Teri
Azad-e-Qaid-e-Awwal-o-Akhir Zia Teri

——————–

The Sun
(Translated from Gautier)

O Sun! The world’s essence and motivator you are
The organizer of the book of the world you are

The splendor of existence has been created by you
The verdure of the garden of existence depends on you

The spectacle of elements is maintained by you
The exigency of life in all is maintained by you

Your appearance confers stability on everything
Your illumination and concord is completion of life

You are the sun which establishes light in the world
Which establishes heart, intellect, essence and wisdom

O Sun! Bestow on us the light of wisdom
Bestow your luster’s light on the intellect’s eye

You are the decorator of necessaries of existence’ assemblage
You are the Yazdan of the denizens of the high and the low

Your excellence is reflected from every living thing
The mountain range also shows your elegance

You are the sustainer of the life of all
You are the king of the light’s children

There is no beginning and no end of yours
Free of limits of time is the light of yours

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے