امتحان

کہا پہاڑ کي ندي نے سنگ ريزے سے
فتادگي و سرا فگندگي تري معراج

ترا يہ حال کہ پامال و درد مند ہے تو
مري يہ شان کہ دريا بھي ہے مرا محتاج

جہاں ميں تو کسي ديوار سے نہ ٹکرايا
کسے خبر کہ تو ہے سنگ خارہ يا کہ زجاج

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے