Ye Hikmat Malkoti, Ye Ilm Lahooti

تصوف

يہ حکمت ملکوتی، يہ علم لاہوتی
حرم کے درد کا درماں نہيں تو کچھ بھی نہيں
يہ ذکر نيم شبی ، يہ مراقبے ، يہ سرور
تری خودی کے نگہباں نہيں تو کچھ بھی نہيں
يہ عقل، جو مہ و پرويں کا کھيلتی ہے شکار
شريک شورش پنہاں نہيں تو کچھ بھی نہيں
خرد نے کہہ بھی ديا ‘لاالہ’ تو کيا حاصل
دل و نگاہ مسلماں نہيں تو کچھ بھی نہيں

عجب نہيں کہ پريشاں ہے گفتگو ميری
فروغ صبح پريشاں نہيں تو کچھ بھی نہيں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے