گل ِ رنگيں

تُو شناسائے خراشِ عقدۂ مشکِل نہيں
اے گلِ رنگيں ترے پہلو ميں شايد دل نہيں
زيبِ محفل ہے ، شريکِ شورشِ محفل نہيں
يہ فراغت بزمِ ہستی ميں مجھے حاصل نہيں

اس چمن ميں ميں سراپا سوز و سازِ آرزو
اور تيری  زندگانی  بے  گدازِ  آرزو

توڑ لينا شاخ سے تجھ کو مرا آئيں نہيں
يہ نظر غير از نگاہِ چشمِ صورت بيں نہيں
آہ! يہ دستِ جفا جُو اے گلِ رنگيں نہيں
کس طرح تجھ کو يہ سمجھاؤں کہ ميں گلچيں نہيں

کام مجھ کو ديدۂ حکمت کے اُلجھيڑوں سے کيا
ديدۂ بلبل سے ميں کرتا ہوں نظّارہ ترا

سَو زبانوں پر بھی خاموشی تجھے منظور ہے
راز وہ کيا ہے ترے سينے ميں جو مستور ہے
ميری صورت تو بھی اک برگِ رياضِ ُطور ہے
مَيں چمن سے دور ہوں تُو بھی چمن سے دور ہے

مطمئن ہے تو ، پريشاں مثلِ بُو رہتا ہوں مَيں
زخمئ شمشيرِ ذوقِ جستجو رہتا ہوں مَيں

يہ پريشانی مری سامانِ جمعيّت نہ ہو
يہ جگر سوزی چراغِ خانۂ حِکمت نہ ہو
ناتوانی ہی مری سرمايۂ قوّت نہ ہو
رشکِ جامِ جم مرا آ ينۂ حيرت نہ ہو

يہ تلاشِ متّصل شمعِ جہاں افروز ہے

توسنِ ادراکِ انساں کو خرام آموز ہے

——————

مشکل الفاظ کے معانی

گل رنگیں: رنگدار پھول، عقدہ مشکل: مشکل معاملہ، مشکل کی گرہ، زیب محفل: محفل کو سجانے والا، شورش: ہنگامہ، رونق۔ہستی: زند|گی، سراپا: سر سے پاؤں تک، سوزوسازآرزو: مراد عشق کی تپش اور اسکی لذت، بے گدازآرزو: مراد آرزو کی لذت سے خالی، نظر: مراد نقطہ نگاہ، چشم صورت بیں: ظاہر کو دیکھنے والی آنکھ، غیر:سواۓ،

دست جفاجو: سختی کرنے والا،یعنی توڑنے والا ہاتھ، گل چیں: پھول توڑنے والا، دیدۂ حکمت: فلسفیانہ سوچ والی نگاہ، الجھیڑا:بکھیڑا، الجھن، سو زبان: مراد بہت سی پتیاں، مراد مختلف قسم کے پھولوں کی پتیاں، مستور:  چھپا ہوا، میری صورت: میری طرح، برگ: پھول کی پتی، ریاض طور: طور کاباغ(وہ جگہ جہاں حضرت موسی کو خدا کا جلوہ نظرآیا)، شمشیر: تلوار،

ذوق جستجو: تلاش کی لگن، مراد محبوب حقیقی کے حسن کو قدرتی نظاروں می تلاش کرنے کی لذت، سامان جمعیت: اطمینان اور سکون کا سبب، جگر سوزی: دل کو جلانے کا عمل جو عشق کے سبب ہے، خانہ حکمت: مراد فلسفیانہ سوچوں کا گھر،رشک: کسی کی خوبی دیکھ کر خود میں اس خوبی کی خواہش کرنا، جام جم: روایت ہے کہ ایران کے قدیم بادشاہ جمشید کے پاس ایک پیالہ تھا جس میں دنیا نظر آتی ہے، آءینہ حیرت: مراد حیرانی میں ڈوب جانے کی حالت، تلاش متصل: لگاتار یا مسلسل جستجو، توسن: گھوڑا، خرام آموز:ٹہلنا/چلنا سکھانے والی

 

………………

 

TRANSLITERATION

Gul-e-Rangeen

(1)
tu shanasa e kharash e auqda mushkil nahin
ae gul e rangeen tere pehlu mein shaid dil nahin

(2)
zaib e mehfil hai, shareek e shorish e mehfil nahin
ye faraghat bazm e hasti mein mujhe hasil nahin

(3)
iss chaman mein mein sarapa souz o saaz e aarzu
aur teri zindagani be gudaz e aarzu

(4)
torh lena shakh se tujh ko mera aaeen nahin
ye nazar ghair az nagah e chasm e surat been nahin

(5)
ah! ye dast e jafa ju ae gul e rangeen nahin
kis tarah tujh ko ye samjhaun ke main gulcheen nahin

(6)
kam mujh ko didah e hikmat ke uljhairon se kya
didah e bulbul se main karta hun nazara tera

(7)
so zubanon par bhi khamoshi tuhje manzoor hai
raaz woh kya hai tere sine mein jo mastoor hai

(8)
meri soorat tu bhi ek berg e riyaz e toor hai
main chaman se door hun, tu bhi chaman se door hai

(9)
matmaen hai tu, preshan misl e bu rehta hun main
zakhmi e shamsheer e zauq justuju rehta hun main

(10)
ye preshani meri saman e jamiat na ho
ye jigar sauzi charagh e khana e hikmat na ho

(11)
natawani hi meri sarmaya e quwwat na ho
rashk e jam e jim mera aaeena e hairat na ho

(12)
ye talash e muttasil shama e jahan afroz hai
tosin e idraak e insan ko kharam aamuz hai

………………

The Colorful Rose

You are not familiar with the hardships of solving enigmas
O Beautiful Rose! Perhaps you do not have sublime feelings in your heart
Though you adorn the assembly yet do not participate in its struggles
In life’s assembly I am not endowed with this comfort
In this garden I am the complete orchestra of Longing
And your life is devoid of the warmth of that Longing
To pluck you from the branch is not my custom
This sight is not different from the sight of the eye which can only see the appearances
Ah! O colourful rose this hand is not one of a tormentor
How can I explain to you that I am not a flower picker
I am not concerned with intricacies of the philosophic eye
Like a lover I see you through the nightingale’s eye
In spite of innumerable tongues you have chosen silence
What is the secret which is concealed in your bosom (heart)?
Like me you are also a leaf from the garden of Tur
Far from the garden I am, far from the garden you are
You are content but scattered like fragrance I am
Wounded by the sword of love for search I am
This perturbation of mine a means for fulfillment could be
This torment a source of my intellectual illumination could be
This very frailty of mine the means of strength could be
This mirror of mine envy of the cup of Jam could be
This constant search is a world‐illuminating candle
And teaches to the steed of human intellect its gait

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے