Home / علامہ اقبال شاعری / نشاں يہي ہے زمانے ميں زندہ قوموں کا
Nishaan Yahi Hay Zamany May Zinda Qoumoon Ka

نشاں يہي ہے زمانے ميں زندہ قوموں کا

(Armaghan-e-Hijaz-34)

Nishan Yehi Hai Zamane Mein Zinda Qaumon Ka

(نشان یہی ہے زمانے میں زندہ قوموں کا)

It is the sign of living nations

نشاں يہي ہے زمانے ميں زندہ قوموں کا
کہ صبح و شام بدلتي ہيں ان کي تقديريں
کمال صدق و مروت ہے زندگي ان کي
معاف کرتي ہے فطرت بھي ان کي تقصيريں
قلندرانہ ادائيں، سکندرانہ جلال
يہ امتيں ہيں جہاں ميں برہنہ شمشيريں
خودي سے مرد خود آگاہ کا جمال و جلال
کہ يہ کتاب ہے، باقي تمام تفسيريں
شکوہ عيد کا منکر نہيں ہوں ميں، ليکن
قبول حق ہيں فقط مرد حر کي تکبيريں
حکيم ميري نواؤں کا راز کيا جانے
ورائے عقل ہيں اہل جنوں کي تدبيريں

Translitation

Nishan Yehi Hai Zamane Mein Zinda Qoumon Ka
Ke Subha-O-Sham Badalti Hain In Ki Taqdeerain

It is the sign of living nations
their fate changes day and night;

Kamal-E-Sidq-O-Marawwat Hai Zindagi In Ki
Maaf Karti Hai Fitrat Bhi In Ki Taqseerain

their life is sincerity and generosity to perfection,
Nature too forgives their follies;

Qalanderana Ada’en, Sikandarana Jalal
Ye Ummatain Hain Jahan Mein Barhana Shamsheerain

in manners qalandar‐like, in majesty as Iskander:
these people are like naked swords.

Khudi Se Mard-E-Khud Agah Ka Jamal-O-Jalal
K Ye Kitab Hai, Baqi Tamam Tafseerain

Beauty and majesty of a self‐conscious man flows from khudi:
it is the text, the rest are commentaries.

Shikwa-E-Eid Ka Munkir Nahin Hun Mein, Lekin
Qabool-E-Haq Hain Faqat Mard-E-Hur Ki Takbeerain

I don’t deny the splendour of the days of ‘Id,
but alas! only the takbirs of free men are acceptable to God.

Hakeem Meri Nawa’on Ka Raaz Kya Jane
Wara’ay Aqal Hain Ahl-E-Junoon Ki Tadbeerain

What can the sage know my songs’ secret?
the words of man of madness are beyond reason’s ken.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے