Ajab Waiz Ki Deen-Dari Hai Ya Rab!

عجب واعظ کی دينداری ہے يا رب

عجب واعظ کی دينداری ہے يا رب
عداوت ہے اسے سارے جہاں سے
کوئی اب تک نہ يہ سمجھا کہ انساں
کہاں جاتا ہے، آتا ہے کہاں سے
وہيں سے رات کو ظلمت ملی ہے
چمک تارے نے پائی ہے جہاں سے
ہم اپنی درد مندی کا فسانہ
سنا کرتے ہيں اپنے رازداں سے
بڑی باريک ہيں واعظ کی چاليں
لرز جاتا ہے آواز اذاں سے
————–
Transliteration
Ajab Waiz Ki Deen-Dari Hai Ya Rab!
Adawat Hai Isse Sare Jahan Se
Koi Ab Tak Na Ye Samajha Ke Insan
Kahan Jata Hai, Ata Hai Kahan SeWahin Se Raat Ko Zulmat Mili Hai
Chamak Tare Ne Payi Hai Jahan Se

Hum Apni Dardmani Ka Fasana
Suna Karte Hain Apne Raazdan Se

Bari Bareek Hain Waaiz Ki Chalain

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے