عجب واعظ کی دينداری ہے يا رب

عجب واعظ کی دينداری ہے يا رب
عداوت ہے اسے سارے جہاں سے
کوئی اب تک نہ يہ سمجھا کہ انساں
کہاں جاتا ہے، آتا ہے کہاں سے
وہيں سے رات کو ظلمت ملی ہے
چمک تارے نے پائی ہے جہاں سے
ہم اپنی درد مندی کا فسانہ
سنا کرتے ہيں اپنے رازداں سے
بڑی باريک ہيں واعظ کی چاليں
لرز جاتا ہے آواز اذاں سے
————–
Transliteration
Ajab Waiz Ki Deen-Dari Hai Ya Rab!
Adawat Hai Isse Sare Jahan Se
Koi Ab Tak Na Ye Samajha Ke Insan
Kahan Jata Hai, Ata Hai Kahan SeWahin Se Raat Ko Zulmat Mili Hai
Chamak Tare Ne Payi Hai Jahan Se

Hum Apni Dardmani Ka Fasana
Suna Karte Hain Apne Raazdan Se

Bari Bareek Hain Waaiz Ki Chalain

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے