Fitrat Ko Khird Ke Ru-Ba-Ru Kar

فطرت کو خرد کے روبرو کر


فطرت کو خرد کے روبرو کر
تسخير مقام رنگ و بو کر
تو اپنی خودی کو کھو چکا ہے
کھوئی ہوئی شے کی جستجو کر
تاروں کی فضا ہے بيکرانہ
تو بھی يہ مقام آرزو کر
عرياں ہيں ترے چمن کی حوريں
چاک گل و لالہ کو رفو کر
بے ذوق نہيں اگرچہ فطرت
جو اس سے نہ ہو سکا ، وہ تو کر

———————

Translation

Fitrat Ko Khird Ke Ru-Ba-Ru Kar
Taskheer-e-Maqam-e-Rang-o-Bu Kar

Tu Apni Khudi Ko Kho Chukka Hai
Khoyi Huwi Shay Ki Justuju Kar

Taron Ki Faza Hai Baikarana
Tu Bhi Ye Maqam Arzu Kar

Uryan Hain Tere Chaman Ki Hoorain
Chaak-e-Gul-o-Lala Ko Rafu Kar

Be-Zauq Nahin Agarche Fitrat
Jo Uss Se Na Ho Saka, Woh Tu Kar !

————————————–

Nature before your mind present,
Subdue this world of hue and scent.

Of Selfhood you appear bereft,
To find the thing lost go on quest.

The stars do shine in boundless space,
Desire to get this lofty place.

Disrobed the houris of your mead,
The rose and tulip darning need.

Of urge, though Nature not deplete,
Yet where it fails you must complete.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے