Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ اول) / کيا عشق ايک زندگئ مستعار کا

کيا عشق ايک زندگئ مستعار کا

کيا عشق ايک زندگئ مستعار کا
کيا عشق پائدار سے ناپائدار کا
وہ عشق جس کی شمع بجھا دے اجل کی پھونک
اس ميں مزا نہيں تپش و انتظار کا
ميری بساط کيا ہے ، تب و تاب يک نفس
شعلے سے بے محل ہے الجھنا شرار کا
کر پہلے مجھ کو زندگی جاوداں عطا
پھر ذوق و شوق ديکھ دل بے قرار کا
کانٹا وہ دے کہ جس کی کھٹک لازوال ہو
يارب ، وہ درد جس کی کسک لازوال ہو

————————

Translation

Kya Ishq Aik Zindagi-e-Mastaar Ka
Kya Ishq Paidar Se Na-Paidar Ka

Woh Ishq Jis Ki Shama Bujha De Ajal Ki Phoonk
Uss Mein Maza Nahin Tapish-o-Intizaar Ka

Meri Bisaat Kya Hai, Tab-o-Taab-e-Yak Nafas
Shole Se Bemehal Hai Ulajhna Sharaar Ka

Kar Pehle Mujh Ko Zindagi Javidan Atta
Phir Zauq-o-Shauq Dekh Dil-e-Beqarar Ka

Kanta Woh De Ke Jis Ki Khatak La-zawal Ho
Ya Rab! Woh Dard Jis Ki Kasak La-zawal Ho

———————-

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے