Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ اول) / يارب ! يہ جہان گزراں خوب ہے ليکن

يارب ! يہ جہان گزراں خوب ہے ليکن

يارب! يہ جہان گزراں خوب ہے ليکن
کيوں خوار ہيں مردان صفا کيش و ہنرمند
گو اس کی خدائی ميں مہاجن کا بھی ہے ہاتھ
دنيا تو سمجھتی ہے فرنگی کو خداوند
تو برگ گيا ہے ندہی اہل خرد را
او کشت گل و لالہ بنجشد بہ خرے چند
حاضر ہيں کليسا ميں کباب و مے گلگوں
مسجد ميں دھرا کيا ہے بجز موعظہ و پند
احکام ترے حق ہيں مگر اپنے مفسر
تاويل سے قرآں کو بنا سکتے ہيں پاژند
فردوس جو تيرا ہے ، کسی نے نہيں ديکھا
افرنگ کا ہر قريہ ہے فردوس کی مانند
مدت سے ہے آوارہ افلاک مرا فکر
کر دے اسے اب چاند کی غاروں ميں نظر بند
فطرت نے مجھے بخشے ہيں جوہر ملکوتی
خاکی ہوں مگر خاک سے رکھتا نہيں پيوند
درويش خدا مست نہ شرقی ہے نہ غربی
گھر ميرا نہ دلی ، نہ صفاہاں ، نہ سمرقند
کہتا ہوں وہی بات سمجھتا ہوں جسے حق
نے ابلہ مسجد ہوں ، نہ تہذيب کا فرزند
اپنے بھی خفا مجھ سے ہيں ، بيگانے بھی ناخوش
ميں زہر ہلاہل کو کبھی کہہ نہ سکا قند
مشکل ہے کہ اک بندہ حق بين و حق انديش
خاشاک کے تودے کو کہے کوہ دماوند
ہوں آتش نمرود کے شعلوں ميں بھی خاموش
ميں بندہ مومن ہوں ، نہيں دانہ اسپند
پر سوز و نظرباز و نکوبين و کم آزار
آزاد و گرفتار و تہی کيسہ و خورسند
ہر حال ميں ميرا دل بے قيد ہے خرم
کيا چھينے گا غنچے سے کوئی ذوق شکر خند
چپ رہ نہ سکا حضرت يزداں ميں بھی اقبال
کرتا کوئی اس بندہ گستاخ کا منہ بند

——————————

Translation

Ya Rab! Ye Jahan-e-Guzran Khoob Hai Lekin
Kyun Khawar Hain Mardan-e-Safa Kaish-o-Hunar Mand

Go Us Ski Khudai Mein Mahajan Ka Bhi Hai Haath
Dunya To Samajhti Hai Farangi Ko Khudawand

To Barg-e-Gya Hai Nadhi Ahle-e-Khirad Ra
Aur Kisht-e-Gul-o-Lala Babkhashand Ba Kharay Chand

Hazir Hain Kalisa Mein Kabab-o-Ma’ay Gulgoon
Masjid Mein Dhara Kya Hai Bajaz Moaza-o-Pand

Ahkaam Tere Haq Hain Magar Apne Mufassir
Taveel  Se Quran Ko Bana Sakte Hain Pazand

Firdous Jo Tera Hai, Kisi Ne Nahin Dekha
Afrang Ka Har Qariya Hai Firdous Ki Manand

Muddat Se Hai Awara’ay Aflaak Mera Fikar
Kar De Isse Ab Chand Ki Gharon Mein Nazarband

Fitrat Ne Mujhe Bakhse Hain Johar-e-Malkooti
Khaki Hun Magar Khaak Se Rakhta Nahin Paewand

Darvesh-e-Khuda Mast Na Sharqi Hai Na Gharbi
Ghar Mera Na Dilli, Na Safahan, Na Samarqand

Kehta Hun Wohi Baat Samajhta Hun Jise Haq
Ne Abla-e-Masjid Hun, Na Tehzeeb Ka Farzand

Apne Bhi Khafa Mujh Se Hain, Begane Bhi Na-Khush
Main Zehar-e-Halahil Ko Kabhi Keh Na Saka Qand

Mushkil Hai Ke Ek Banda’ay Haq Been-o-Haq Andesh
Khashaak Ke To De Ko Kahe Koh-e-Damawand

Hun Atish-e-Namrood Ke Shaolon Mein Bhi Khamosh
Main Band’ay Momin Hun, Nahin Dana’ay Aspand

Pursoz-o-Nazarbaz-o-Nikobeen-o-Kam Azar
Azad-o-Giraftar-o-Tehi Keesa-o-Khorsand

Har Haal Mein Mera Dil-e-Be Qaid Hai Khurram
Kya Cheenay Ga Gunche Se Koi Zauq-e-Shakar Khand !

Chup Reh Na Saka Hazrat-e-Yazdan Mein Bhi Iqbal
Karta Koi Iss Banda’ay Gustakh Ka Munh Band !

———————

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے