Na Dair Mein Na Haram Mein Khudi Ki Baidari

تمہید

(1)

نہدير ميں نہ حرم ميں خودی کی بيداری
کہخاوراں ميں ہے قوموں کی روح ترياکی
اگرنہ سہل ہوں تجھ پر زميں کے ہنگامے
بریہے مستی انديشہ ہائے افلاکی
ترینجات غم مرگ سے نہيں ممکن
کہتو خودی کو سمجھتا ہے پيکر خاکی
زمانہاپنے حوادث چھپا نہيں سکتا
تراحجاب ہے قلب و نظر کی ناپاکی
عطاہوا خس و خاشاک ايشيا مجھ کو
کہميرے شعلے ميں ہے سرکشی و بے باکی!

(2)

تراگناہ ہے اقبال! مجلس آرائی
اگرچہتو ہے مثال زمانہ کم پيوند
جوکوکنار کے خوگر تھے، ان غريبوں کو
ترینوا نے ديا ذوق جذبہ ہائے بلند
تڑپرہے ہيں فضاہائے نيلگوں کے ليے
وہپر شکستہ کہ صحن سرا ميں تھے خورسند
تریسزا ہے نوائے سحر سے محرومی

مقامشوق و سرور و نظر سے محرومی

 ——————

Transliteration

Tamheed
(1)
Na Dair Mein Na Haram Mein Khudi Ki Baidari
Ke Khawaran Mein Hai Qoumon Ki Rooh Taryaki

Agar Na Sehal Hon Tujh Par Zameen Ke Hangame
Buri Hai Masti-e-Andaisa Haye Aflaki

Teri Nijat Gham-e-Marg Se Nahin Mumkin
Ke Tu Khudi Ko Samajhta Hai Paikar-e-Khaki

Zamana Apne Hawadas Chupa Nahin Sakta
Tera Hijab Hai Qalb-o-Nazar Ki Na-Paki

Atta Huwa Khs-o-Khashak-e-Asia Mujh Ko
Ke Mere Shaole Mein Hai Sarkashi-o-Bebaki!

(2)
Tera Gunah Hai Iqbal! Majlis Arayi
Agarche Tu Hai Misal-e-Zamana Kam Pewand

Jo Ko Kinar Ke Khugar The, In Ghareebon Ko
Teri Nawa Ne Dia Zauq-e-Jazba Haye Buland

Tarap Rahe Hain Faza Haye Neelgoon Ke LiyeWoh
Par Shakista Ke Sehan Sara Mein The Khorsand

Teri Saza Hai Nawa-e-Sehar Se Mehroomi
Maqam-e-Shauq-o-Suroor-o-Nazar Se Mehroomi

 

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے