کيا کہوں اپنے چمن سے ميں جدا کيونکر ہوا

کيا کہوں اپنے چمن سے ميں جدا کيونکر ہوا
اور اسير حلقہ دام ہوا کيونکر ہوا
جائے حيرت ہے برا سارے زمانے کا ہوں ميں
مجھ کو يہ خلعت شرافت کا عطا کيونکر ہوا
کچھ دکھانے ديکھنے کا تھا تقاضا طور پر
کيا خبر ہے تجھ کو اے دل فيصلہ کيونکر ہوا
ہے طلب بے مدعا ہونے کی بھی اک مدعا
مرغ دل دام تمنا سے رہا کيونکر ہوا
ديکھنے والے يہاں بھی ديکھ ليتے ہيں تجھے
پھر يہ وعدہ حشر کا صبر آزما کيونکر ہوا
حسن کامل ہی نہ ہو اس بے حجابی کا سبب
وہ جو تھا پردوں ميں پنہاں ، خود نما کيونکر ہوا
موت کا نسخہ ابھی باقی ہے اے درد فراق
چارہ گر ديوانہ ہے ، ميں لا دوا کيونکر ہوا
تو نے ديکھا ہے کبھی اے ديدۂ عبرت کہ گل
ہو کے پيدا خاک سے رنگيں قبا کيونکر ہوا
پرسش اعمال سے مقصد تھا رسوائی مری
ورنہ ظاہر تھا سبھی کچھ ، کيا ہوا ، کيونکر ہوا
ميرے مٹنے کا تماشا ديکھنے کی چيز تھی
کيا بتائوں ان کا ميرا سامنا کيونکر ہوا
——————-
Transliteration
Kya Kahun Apne Chaman Se Main Juda Kyunkar Huwa
Aur Aseer-e-Halqa-e-Daam-e-Hawa Kyunkar Huwa
Jaye Hairat Hai Bura Sare Zamane Ka Hun Mein
Mujh Ko Ye Khilaat Sharafat Ka Atta Kyunkar Huwa
Kuch Dekhne Dikhane Ka Tha Taqaza Toor Par
Kya Khabar Hai Tujh Ko Ae Dil Faisala Kyunkar HuwaHai Talab Be-Mudda Hone Ki Bhi Ek Mudda
Murgh-e-Dil Dam-e-Tamanna Se Raha Kyunkar Huwa

Dekhne Wale Yahan Bhi Dekh Lyte Hain Tujhe
Phir Ye Wada Hashar Ka Sabr Azma Kyunkar Huwa

Husn-e-Kamil Hi Na Ho Iss Be-Hijabi Ka Sabab
Woh Jo Tha Pardon Mein Pinhan, Khudnuma Kyunkar Huwa

Mout Ka Nuskha Abhi Baqi Hai Ae Dard-e-Faraaq!
Charahgar Diwana Hai, Main La-Dawa Kyunkar Huwa

Tu Ne Dekha Hai Kabhi Ae Didah-e-Ibrat Ke Gul
Ho Ke Paida Khak Se Rangeen Qaba Kyunkar Huwa

Pursish-e-Amaal Se Maqsad Tha Ruswayi Meri
Warna Zahir Tha Sabhi Kuch, Kya Huwa, Kyunkar Huwa

Mere Mitne Ka Tamasha Dekhne Ki Cheez Thi
Kya Bataun Un Ka Mera Samna Kyunkar Huwa

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے