Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ اول) / ضمير لالہ مے لعل سے ہوا لبريز

ضمير لالہ مے لعل سے ہوا لبريز

ضمير لالہ مے لعل سے ہوا لبريز
اشارہ پاتے ہی صوفی نے توڑ دی پرہيز
بچھائی ہے جو کہيں عشق نے بساط اپنی
کيا ہے اس نے فقيروں کو وارث پرويز
پرانے ہيں يہ ستارے ، فلک بھی فرسودہ
جہاں وہ چاہيے مجھ کو کہ ہو ابھی نوخيز
کسے خبر ہے کہ ہنگامہ نشور ہے کيا
تری نگاہ کی گردش ہے ميری رستاخيز
نہ چھين لذت آہ سحر گہی مجھ سے
نہ کر نگہ سے تغافل کو التفات آميز
دل غميں کے موافق نہيں ہے موسم گل
صدائے مرغ چمن ہے بہت نشاط انگيز
حديث بے خبراں ہے ، تو با زمانہ بساز
زمانہ با تو نسازد ، تو با زمانہ ستيز

———————–

Translation

Zameer-e-Lala Mai’ay La’al Se Huwa Labraiz
Ishara Pate Hi Sufi Ne Tor Di Parhaiz

Bichayi Hai Jo Kahin Ishq Ne Bisat Apni
Kiya Hai Iss Ne Faqeeron Ko Waris-e-Parvaiz

Purane Hain Ye Sitare, Falak Bhi Farsudah
Jahan Woh Chahiye Mujh Ko Ke Ho Abi Naukhaiz

Kise Khabar Hai Ke Hangama’ay Nishor Hai Kya
Teri Nigah Ki Gardish Hai Meri Rasta Khaiz

Na Cheen Lazzat-e-Aah-e-Sahar-Gehi Mujh Se
Na Kar Nigah Se Tughafil Ko Iltifat Amaiz

Dil-e-Ghameen Ke Muwafiq Bahin Hai Mousam-e-Gul
Sada’ay Murgh-e-Chaman Hai Bohat Nishaat Angaiz

Hadees-e-Bekhabran Hai, Tu Ba-Zamana Ba-Saaz
Zamana Ba Toon-Saazd, Tu Ba Zamana Sataiz

———————-

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے