Home / علامہ اقبال شاعری / با نگ درا / بانگ درا (حصہ دوم) / با نگ درا – غز لیات – (حصہ دوم)

با نگ درا – غز لیات – (حصہ دوم)

با نگ درا – غز ليات – (حصہ دوم) Archives – Urdu Poetry Library

زندگی انساں کی اک دم کے سوا کچھ بھی نہيں

Zindagi Insan Ki Ek Dam Ke Sawa Kuch Bhi Nahin

زندگی انساں کی  اک دم کے سوا کچھ بھی نہيں دم ہوا کی موج ہے ،  رَم کے سِوا  کچھ بھی نہيں گل تَبَسُّم کہہ رہا  تھا  زندگانی  کو  مگر شمع بولی ،  گِریہء غم کے سِوا  کچھ بھی نہيں رازِہستی راز ہے جب تک کوئی محرم نہ ہو کھل …

Read More »

الہي عقل خجستہ پے کو ذرا سي ديوانگي سکھا دے

Elahi Aqal-e-Khujasta Pe Ko Zara Si Diwangi Sikha De

الہي عقل خجستہ پے کو ذرا سي ديوانگي سکھا دے اسے ہے سودائے بخيہ کاري ، مجھے سر پيرہن نہيں ہے ملا محبت کا سوز مجھ کو تو بولے صبح ازل فرشتے مثال شمع مزار ہے تو ، تري کوئي انجمن نہيں ہے يہاں کہاں ہم نفس ميسر ، يہ ديس نا آشنا ہے اے …

Read More »

زمانہ ديکھے گا جب مرے دل سے محشر اٹھے گا گفتگو کا

Zamane Dekhe Ga Jab Mere Dil Se Mehshar Uthe Ga Gutugoo Ka

زمانہ ديکھے گا جب مرے دل سے محشر اٹھے گا گفتگو کا مري خموشي نہيں ہے ، گويا مزار ہے حرف آرزو کا جو موج دريا لگي يہ کہنے ، سفر سے قائم ہے شان ميري گہر يہ بولا صدف نشيني ہے مجھ کو سامان آبرو کا نہ ہو طبيعت ہي جن کي قابل ، …

Read More »

چمک تيري عياں بجلي ميں ، آتش ميں ، شرارے ميں

Chamak Teri Ayan Bijli Mein, Atish Mein, Sharare Mein

چمک تيري عياں بجلي ميں ، آتش ميں ، شرارے ميں جھلک تيري ہويدا چاند ميں ،سورج ميں ، تارے ميں بلندي آسمانوں ميں ، زمينوں ميں تري پستي رواني بحر ميں ، افتادگي تيري کنارے ميں شريعت کيوں گريباں گير ہو ذوق تکلم کي چھپا جاتا ہوں اپنے دل کا مطلب استعارے ميں جو ہے بيدار …

Read More »

يوں تو اے بزم جہاں! دلکش تھے ہنگامے ترے

Yun To Ae Bazm-e-Jahan! Dilkash The Hangame Tere

يوں تو اے بزم جہاں! دلکش تھے ہنگامے ترے اک ذرا افسردگي تيرے تماشائوں ميں تھي پا گئي آسودگي کوئے محبت ميں وہ خاک مدتوں آوارہ جو حکمت کے صحرائوں ميں تھي کس قدر اے مے! تجھے رسم حجاب آئي پسند پردہ انگور سے نکلي تو مينائوں ميں تھي حسن کي تاثير پر غالب نہ آ سکتا …

Read More »

مثال پرتو مے ، طوف جام کرتے ہيں

Misal-e-Partou Mai Tof-e-Jaam Karte Hain

مثال پرتو مے ، طوف جام کرتے ہيں يہي نماز ادا صبح و شام کرتے ہيں خصوصيت نہيں کچھ اس ميں اے کليم تري شجر حجر بھي خدا سے کلام کرتے ہيں نيا جہاں کوئي اے شمع ڈھونڈيے کہ يہاں ستم کش تپش ناتمام کرتے ہيں بھلي ہے ہم نفسو اس چمن ميں خاموشي کہ خوشنوائوں کو پابند …

Read More »

مارچ 1907

Zamana Aya Hay Bay Hijabi Ka, Aam Deedar Yaar Ho Ga

مارچ 1907ء زمانہ آيا ہے بے حجابي کا ، عام ديدار يار ہو گا سکوت تھا پردہ دار جس کا ، وہ راز اب آشکار ہوگا گزر گيا اب وہ دور ساقي کہ چھپ کے پيتے تھے پينے والے بنے گا سارا جہان مے خانہ ، ہر کوئي بادہ خوار ہو گا کبھي جو آوارہ …

Read More »