عورت

عورت Archives – Urdu Poetry Library

عورت

Johar Mard e Ayan Hota Hy By Mannat Gayer

جوہر مرد عياں ہوتا ہے بے منت غير غير کے ہاتھ ميں ہے جوہر عورت کي نمود راز ہے اس کے تپ غم کا يہي نکتہ شوق آتشيں ، لذت تخليق سے ہے اس کا وجود کھلتے جاتے ہيں اسي آگ سے اسرار حيات گرم اسي آگ سے ہے معرکہ …

Read More »

عورت اور تعليم

Tahzeeb e frangi Hy Agar Marg e Amomat

تہذيب فرنگي ہے اگر مرگ امومت ہے حضرت انساں کے ليے اس کا ثمر موت جس علم کي تاثير سے زن ہوتي ہے نا زن کہتے ہيں اسي علم کو ارباب نظر موت بيگانہ رہے ديں سے اگر مدرسہ زن ہے عشق و محبت کے ليے علم و ہنر موت …

Read More »

عورت کي حفاظت

Ek Zinda Haqeeqat Mere Seny Mein Hy Mastoor

اک زندہ حقيقت مرے سينے ميں ہے مستور کيا سمجھے گا وہ جس کي رگوں ميں ہے لہو سرد نے پردہ ، نہ تعليم ، نئي ہو کہ پراني نسوانيت زن کا نگہباں ہے فقط مرد جس قوم نے اس زندہ حقيقت کو نہ پايا اس قوم کا خورشيد بہت …

Read More »

آزادی نسواں

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ زہر ہے ، وہ قند کيا فائدہ ، کچھ کہہ کے بنوں اور بھي معتوب پہلے ہي خفا مجھ سے ہيں تہذيب کے فرزند اس راز کو عورت کي بصيرت ہي کرے فاش مجبور ہيں …

Read More »

عورت

Wajud e Zan Se Hy Tasveer Kainat Mein Rang

وجود زن سے ہے تصوير کائنات ميں رنگ اسي کے ساز سے ہے زندگي کا سوز دروں شرف ميں بڑھ کے ثريا سے مشت خاک اس کي کہ ہر شرف ہے اسي درج کا در مکنوں مکالمات فلاطوں نہ لکھ سکي ، ليکن اسي کے شعلے سے ٹوٹا شرار افلاطوں …

Read More »

خلوت

Ruswa Kia Is Door Ko Jalwat Ki Hawas Ne

رسوا کيا اس دور کو جلوت کي ہوس نے روشن ہے نگہ ، آئنہ دل ہے مکدر بڑھ جاتا ہے جب ذوق نظر اپني حدوں سے ہو جاتے ہيں افکار پراگندہ و ابتر آغوش صدف جس کے نصيبوں ميں نہيں ہے وہ قطرہ نيساں کبھي بنتا نہيں گوہر خلوت ميں …

Read More »

پردہ

Bahot Rang Badly Sapahr Bareen Nay

بہت رنگ بدلے سپہر بريں نے خدايا يہ دنيا جہاں تھي ، وہيں ہے تفاوت نہ ديکھا زن و شو ميں ميں نے وہ خلوت نشيں ہے ، يہ خلوت نشيں ہے ابھي تک ہے پردے ميں اولاد آدم کسي کي خودي آشکارا نہيں ہے  

Read More »

مرد فرنگ

Hzar Baar Hakeemu Nay Isko Sulghaya

ھزار بار حکیموں نے اس کو سلجھایا مگر یہ مسلہ زن رھا وہیں کا وہیں قصور زن کا نہیں ہے کچھ اس خرابی میں گواہ اس کی شرافت پہ ہیں مہ و پرویں فساد کا ہے فرنگی معاشرت میں ظہور کہ مرد سادہ ہے بیچارہ زن شناس نہیں

Read More »